The news is by your side.

Advertisement

نویں، دسویں جماعت کے پریکٹیکل امتحانات

کرا چی: نویں اور دسویں جماعت کے سالانہ امتحانات کا اختتام ہو گیا، اب دوسرے مرحلے پر سالانہ پریکٹیکل امتحانات کی تیاری کو آخری شکل دی جا رہی ہے۔

تفصیلات کے مطابق چیئرمین میٹرک بورڈ سید شرف علی شاہ نے کہا ہے کہ ثانوی تعلیمی بورڈ کے تحت ہونے والے نویں اور دسویں جماعت کے سالانہ امتحانات ہفتے کے روز پُر امن ماحول میں ختم ہو گئے، کوڈیفیکشن کا کام فوری شروع کر دیا گیا ہے، بروقت نتائج کا اجرا یقینی بنایا جائے گا۔

چیئرمین میٹرک بورڈ نے کہا اب دوسرا مرحلہ سالانہ پریکٹیکل امتحانات کا ہے، جو 27 جولائی سے شروع ہوں گے، انھوں نے کہا کہ بورڈ سے الحاق تمام شدہ اسکول دیے گئے شیڈول کے اختتام سے پہلے ہی عملی امتحانات کے انعقاد کو یقینی بنائیں۔

یہ بات چیئرمین میٹرک بورڈ سید شرف علی شاہ نے ہفتے کے روز اپنے دفتر میں بلائی گئی ایک میٹنگ کے دوران کہی، انھوں نے امتحانات کے پُر امن انعقاد پر ناظم امتحانات سید محمد علی شائق، بورڈ کے ویجیلنس افسران، بورڈ کے عملے، میڈیا، اساتذہ، سینٹر سپرنٹنڈنٹس، والدین اور طلبہ کی جانب سے تعاون پر سب کو خراج تحسین پیش کیا۔

انھوں نے کہا کہ فوری طور پر کوڈیفیکشن کا کام شروع کر دیا گیا ہے، جس کے بعد مرکزی سینٹرز پر طلبہ کی کاپیوں کی جانچ شروع کر دی جائے گی، تاکہ حکومت سندھ کی جانب سے دی گئی مقررہ تاریخ سے پہلے امتحانی نتائج کا اجرا یقینی بنایا جا سکے۔

لاہور میں چھینے گئے حل شدہ امتحانی پرچوں کو آگ لگانے کی ویڈیو سامنے آ گئی

اس موقع پر بورڈ کے افسران کے ساتھ امتحانات کے پورے دورانیے کا جائزہ لیتے ہوئے، کچھ سینٹرز پر پہلا پرچہ دیر سے پہنچنے کی شکایت پر اُن افسران کے خلاف فوری کارروائی بھی عمل میں لائی گئی۔

چیئرمین نے یہ بھی کہا کہ اس سال بھی امتحانات کے دوران کے الیکٹرک نے لوڈ شیڈنگ کے دورانیے میں کسی بھی قسم کی سہولت فراہم نہیں کی۔

ان کا کہنا تھا کہ 443 امتحانی مراکز پر جہاں سے بھی شکایات موصول ہوئی ہیں اس کی رپورٹ بنا کر جلد ہی دی جائے، تاکہ ان سینٹرز کو بلیک لسٹ کیا جائے، جب کہ شفاف انداز میں چلنے والے مراکز کو بورڈ کی جانب سے ہر قسم کی سہولت فراہم کی جائے گی۔

انھوں نے کہا کہ نقل کے رجحان کو ختم کرنے کے لیے اس سال بھی ہماری یہی کوشش تھی کہ نقل مافیا کو امتحانی مراکز سے دور رکھا جائے، امتحانات کے دوران بورڈ میں رپورٹ کیے گئے کیسز میں اصل امیدواروں کی جگہ امتحان دینے والے 2 افراد جب کہ نقل کرتے ہوئے تقریباً 47 امیدواروں کو پکڑ کر سزا دینے والی کمیٹی کے سپرد کیا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں