The news is by your side.

Advertisement

تحریک عدم اعتماد مسترد: بلاول نے اداروں سے مدد مانگ لی

اسلام آباد : تحریک عدم اعتماد مسترد ہونے اپوزیشن نے اسمبلی میں دھرنا دینے کا فیصلہ کرلیا، بلاول بھٹو نے اس حوالے سے کہا ہے کہ ڈپٹی اسپیکر نے غیر آئینی کام کیا، پاکستان کا آئین تڑوایا گیا اور آئین توڑنے کی سزا واضح ہے۔

چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم سوری کی جانب سے تحریک عدم اعتماد مسترد ہونے پر شدید ردعمل کا اظہار کیا اور کہا کہ ہمارے پاس اکثریت ہے کہ وزیراعظم کو شکست دیں۔

بلاول بھٹو نے مزید کہ حکومت نے تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ روک کر آئین کی خلاف ورزی کی ہے، اداروں سے مطالبہ ہے کہ پاکستان کے آئین کی حفاظت کریں، ادارے اسے برقرار رکھیں، دفاع کریں اور عمل درآمد کریں۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ ہم اپنے وکلاء کے ساتھ ابھی سپریم کورٹ جائیں گے لیکن غیر آئینی کام نہیں کرنے دیں گے۔

ان کا کہنا ہے کہ پارلیمان کو تحلیل نہیں کیا جاسکتا، ہم نے اسپیکر کے خلاف عدم اعتماد جمع کرکے ان سے یہ آپشن چھینا ہے۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ آئین اور جمہوریت کا راستہ یہ ہے کہ سپریم کورٹ نے فیصلہ دینا ہے، کسی کٹھ پتلی کو غیرجمہوری شخص کو عوام کے حق پرڈاکہ نہیں ڈالنے دیں گے۔

انہوں نے اپنی گفتگو میں عمران خان کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ خان صاحب جھوٹی عالمی سازش قرار دے کر عدم اعتماد سے بھاگ رہے ہیں اور میدان سے بھاگنا بچگانہ حرکت ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں