18.3 C
Ashburn
ہفتہ, مئی 25, 2024
اشتہار

سعودی عرب: مقامی آن لائن بزنس میں اضافہ

اشتہار

حیرت انگیز

ریاض: سعودی عرب میں آن لائن خریداروں کی جانب سے بین الاقوامی پلیٹ فارمز کی جگہ مقامی پلیٹ فارمز اور بزنس سے خریداری کرنے کا رجحان بن رہا ہے۔

اردو نیوز کے مطابق سعودی عرب کا ریٹیل سیکٹر اپنی ای کامرس مارکیٹ پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے کیونکہ مملکت میں آن لائن خریداروں میں سے 74 فیصد کے عالمی سے مقامی پلیٹ فارمز پر منتقل ہونے کی توقع ہے۔

معروف عالمی مینجمنٹ کنسلٹنگ فرم کیرنی اور سعودی کنسلٹنگ کمپنی مکاتفہ نے اپنی حالیہ رپورٹ میں بتایا کہ مقامی اور ہائبرڈ کھلاڑی چین، خلیج تعاون کونسل، یورپ اور امریکا کے اپنے انٹرنیشل ہم منصبوں کے خلاف مضبوط پیش رفت کر رہے ہیں۔

- Advertisement -

رپورٹ میں کہا گیا کہ 19.3 ارب ریال کی لاگت والی مملکت کی ای کامرس مارکیٹ مجموعی طور پر 347.2 ارب ریال ریٹیل مارکیٹ کا 6 فیصد ہے اور 2026 تک مجموعی ریٹیل مارکیٹ کے 7.5 فیصد تک پہنچنے کے لیے مزید 34.7 بلین ریال تک بڑھنے کی توقع ہے۔

توسیع پذیر ای کامرس ماحولیاتی نظام مملکت کے وژن 2030 کے مقاصد کے مطابق جدت، ملازمت کی تخلیق اور نجی شعبے کی ترقی کی راہ ہموار کرے گا۔

کیرنی مڈل ایسٹ کے پارٹنر محمد ضدی نے کہا کہ ترقی کرتا ہوا ای کامرس ماحولیاتی نظام شہریوں کو وژن 2030 کے تحت حکومتی انیشی ایٹوز کے مطابق ڈیجیٹل ادائیگی کے اختراعی اختیارات استعمال کرنے کا اختیار دیتا ہے تاکہ اس شعبے کی ترقی کے لیے نجی شعبے کی سرمایہ کاری کی رہنمائی کی جا سکے۔

مثال کے طور پر کیش لیس لین دین میں اضافہ اور ای کامرس کی جغرافیائی کوریج کو مملکت کے بڑے شہروں سے باہر کی ترسیل بڑھانا۔

انہوں نے مزید کہا کہ مقامی اور ہائبرڈ ای کامرس پلیئرز کی ترقی صارفین کے مفادات کے تحفظ اور روزگار کے مواقع کے ساتھ مقامی سرمایہ کاری کو فروغ دینے میں معاون ثابت ہوگی۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ کراس بارڈر آن لائن شاپنگ سے کم آمدنی ہونے کی توقع ہے کیونکہ مقامی اور ہائبرڈ کمپنیاں اٹریکشن حاصل کر رہی ہیں۔

کراس بارڈر آن لائن شاپنگ 2021 میں تمام ای کامرس ریوینوز 59 فیصد سے کم ہو کر 2026 تک 49 فیصد رہ جائیں گے۔

رپورٹ کے مطابق تمام ای کامرس شرکا کے لیے برابری کا میدان بنانے، صارفین کے مفادات کے تحفظ اور ملکی سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کے لیے مزید مدد فراہم کی جانی چاہیئے۔

مکاتفہ کے سی ای او ولید السعود نے کہا کہ یہ ایک مضبوط علامت ہے کہ مقامی ای کامرس کے کاروبار مارکیٹ میں زیادہ توجہ حاصل کر رہے ہیں، ہمیں اس بات کو یقینی بنانا چاہیئے کہ ان کاروباروں کو سرحد پار اکاؤنٹس کی مدد حاصل ہو۔

انہوں نے مزید کہا کہ ددآمد کی مقدار پر حدیں متعارف کروائی جا سکتی ہیں اور سرحد پار پلیئرز کے لیے مقامی معیارات کو لازمی قرار دیا جا سکتا ہے، اگر ہم تمام ای کامرس پلیئرز کے لیے لیول پلیئنگ فیلڈ بنانا چاہتے ہیں تو اس قسم کے اقدامات پر توجہ دینے کی ضرورت ہوگی۔

Comments

اہم ترین

ویب ڈیسک
ویب ڈیسک
اے آر وائی نیوز کی ڈیجیٹل ڈیسک کی جانب سے شائع کی گئی خبریں

مزید خبریں