The news is by your side.

Advertisement

برفانی تودے میں 18 گھنٹے تک معجزاتی طور پر لڑکی زندہ

مظفرآباد: آزاد کشمیر میں برفانی تودے تلے دبی 12 سالہ لڑکی کو 18 گھنٹے بعد زندہ نکال لیا گیا۔

خبررساں ادارے کے مطابق ثمینہ نامی 12 سالہ لڑکی کو ریسکیو ٹیموں نے 18 گھنٹے بعد برفانی تودے سے زندہ نکال کر مظفرآباد کے اسپتال منتقل کر دیا۔

لڑکی نے بتایا کہ برفانی تودے میں دبے رہنے کے دوران زندہ بچ جانے کی آس لیے سوئی نہیں، ہاتھ ٹوٹ چکا تھا اور منہ سے خون نکل رہا تھا لیکن امیدوں نے دم نہیں توڑا تھا۔

ثمینہ نے کہا کہ شروع میں لگا کہ میں نہیں بچ پاؤں گی لیکن ہمت نہیں ہاری، چیخ و پکار کی اور مدد کے لیے آوازیں لگائی تو کسی نے سن لیں اور مدد کو آن پہنچے۔

یہ بھی پڑھیں: برفباری کی تباہ کاریاں، پاک فوج کی امدادی سرگرمیاں جاری

لڑکی کی والدہ شہناز کا کہنا ہے کہ ہمیں معجزے کی امید تھی اور ایسا ہی ہوا، میرے بھائی ارشاد کو بھی امید تھی کہ ثمنیہ کو زندہ بچا لیا جائے گا پھر قدرت نے معجزہ دکھایا اور بیٹی زندہ مل گئی۔

خیال رہے آزادکشمیر اور بلوچستان میں برفباری نے تباہی مچادی ہے، دو روز کے دوران آزاد کشمیر، گلگت بلتستان اور بلوچستان میں جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 100 ہوگئی ہے ، برف باری سے متاثرہ علاقوں میں آپریشن جاری ہے اور پاک فوج کی ٹیمیں بھی امدادی کاموں میں مصروف ہیں۔

وادی نیلم میں برفانی تودہ گرنے سے62 ہلاکتیں ہوئی جبکہ 56مکان تباہ ہوگئے، ترجمان صوبائی حکومت کا کہنا ہے کہ متاثرین کو کمبل، خوراک پہنچادی گئی، اسپتالوں اور اسکولوں میں عارضی شیلٹر فراہم کردیا گیا ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں