افغان خفیہ ایجنسی کے اہلکاروں کو پاکستانی شناختی کارڈ کے اجراء کا انکشاف Afghan spy
The news is by your side.

Advertisement

افغان انٹیلی جنس اہلکاروں کو پاکستانی شناختی کارڈ کے اجراء کا انکشاف

اسلام آباد : افغان خفیہ ایجنسی کے اہلکاروں کونادرا حکام کی جا نب سے پاکستانی شناختی کارڈ جاری ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سینیٹ کی کابینہ سیکریٹریٹ کمیٹی کی میٹنگ کے اختتام پر سینیٹر طلحہٰ محمودنے میڈیا نمائندگان کو بریفنگ دیتے ہوئے انکشاف کیا کہ پاکستان میں تاجک اور افغان باشندوں کو سیکڑوں کی تعداد میں سبز شناختی کارڈ جاری کیے گئے ہیں۔

سینیٹر طلحہٰ محمود کا کہنا تھا کہ پاکستانی شناخٹی کارڈ کے حامل غیر ملکی افراد کے پاسپورٹ پر بھارت کے ویزے بھی لگے ہوئے ہیں، تاہم نادرا کی جانب سے تاحال بعض شناختی کارڈ کوبلاک نہیں کیے گئے ہیں۔

سینیٹر طلحہٰ محمود نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی شناختی کارڈ کے حامل غیر ملکیوں کی فہرست خفیہ ایجنسی’ آئی بی‘ کے حوالے کردی گئی ہے۔

سینیٹر طلحہٰ محمود نے بتایا کہ کمیٹی کی جانب سے آئی بی کو پاکستانی شناختی کے حامل غیر ملکیوں سے تفتیش کےلیے فہرست دی گئی ہے۔

ان کاکہنا تھا کہ تقریباً 150 کے قریب تاجک باشندوں پاکستانی شناختی کارڈ لاہور سے برآمد ہوئے ہیں جنہیں نادرا حکام کی جانب سے بلاک کردیا گیا ہے۔

سینیٹر طلحہٰ محمود نے میڈیا کو بتایا کہ جن غیر ملکیوں کے شناختی کارڈ لاہور سے برآمد ہوئے ہیں انہیں تاحال گرفتار نہیں کیا گیا ہے، اور نہ ہی نادرا حکام نے غیر ملکیوں کوسبز شناختی کے اجراءکی روک تھام کےلیے ابھی تک کوئی قدم نہیں اٹھایا ہے۔

سینیٹر طلحہٰ محمود کا کہنا تھا کہ کمیٹی نے غیر ملکیوں کے سبز شناختی کارڈ کے حامل ہونے سے متعلق آئی بی سے رپورٹ طلب کی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سینیٹ کی کابینہ سیکریٹریٹ کمیٹی کے اجلاس میں آئی بی کے دائریکٹر جنرل ڈاکٹر سلمان خان بھی شریک تھے۔

ڈائریکٹر جنرل آئی بی ڈاکٹر سلمان نے افغان شہریوں کو پاکستانی شناختی کارڈ کے اجراء سے متعلق معاملے پر بریفنگ دی۔

سینیٹ کی کابینہ کمیٹی کے اجلاس میں مہاجرین کی رجسٹریشن، سی پیک میں آئی بی کا کردارپر بھی بریفنگ دی گئی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں