پاناما کیس: جنگ کے رپورٹرنے جج کو کال کرنے کا اعتراف کرلیا -
The news is by your side.

Advertisement

پاناما کیس: جنگ کے رپورٹرنے جج کو کال کرنے کا اعتراف کرلیا

اسلام آباد : روزنامہ جنگ اور دی نیوز کے رپورٹر نے جج سے براہ راست معلومات لینے کی کوشش کا اعتراف کرلیا۔ احمد نورانی نے جواب میں دیگرتمام میڈیا کو جھوٹا قرار دیا۔

تفصیلات کے مطابق احمد نورانی نے توہین عدالت کے نوٹس کا جواب سپریم کورٹ میں جمع کرادیا ہے، روزنامہ جنگ اور دی نیوز کے رپورٹراحمد نورانی نے جج کو کال کرنے پر شرمندگی کا اظہار کرتے ہوئے توہین عدالت کے نوٹس پر اعترافی بیان جمع کرا دیا ہے۔

رپورٹر احمد نورانی نے پاناما کیس کے حوالے سے جج سے براہ راست معلومات لینے کی کوشش کی تھی، رپورٹر نے جسٹس اعجاز افضل خان کو کال کی، رپورٹر نے اپنے جواب میں تسلیم کیا کہ بینچ کے ایک جج کوکال کی گئی۔

احمد نورانی نے جواب میں مزید کہا ہے کہ رجسٹرار کےجواب نہ دینے پر میں نے جج سے رابطہ کیا، جج سے یہ رابطہ تین اور چار جولائی کی درمیانی شب آٹھ بج کر گیارہ منٹ اور آٹھ بج کر چودہ منٹ پرہوا، معزز جج نےفون خود ریسیو کیا۔

بیس جون کو دی نیوز اخبار نے درست خبرشائع کی، خبرمیں کہا گیا کہ ویڈیو ریکارڈنگ پر حسین نواز کا مؤقف مسترد کیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ پاناما کیس میں عدالت کی آبزرویشن تھی کہ جنگ اورجیو نیوزنے غلط رپورٹنگ کی تھی، رپورٹر نے اپنے جواب میں خود کو بچانے کے لئے دیگر میڈیا کوملوث کرنے کی بھی کوشش کی۔


مزید پڑھیں: پاناما عملدرآمد کیس، جنگ گروپ کو توہین عدالت کا نوٹس جاری


جواب میں لکھا گیا ہے کہ روزنامہ جنگ میں تصویرلیکس کی خبر پر مختلف معاملہ ہوا، ذمہ دارانہ رپورٹنگ کے مدنظرعدالت کو بدنام کرنے کی کوشش نہیں کی گئی، بہت سارے دیگراخبارات نے تصویر لیکس کے معاملے پر غلط خبر چلائی، جنگ نیوز نیوز کے رپورٹراحمد نورانی نے جواب میں دیگرتمام میڈیا کو جھوٹا قرار دے دیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں