فوجی عدالتوں میں توسیع کامعاملہ،پارلیمانی رہنماؤں کااجلاس کل ہوگا -
The news is by your side.

Advertisement

فوجی عدالتوں میں توسیع کامعاملہ،پارلیمانی رہنماؤں کااجلاس کل ہوگا

اسلام آباد : فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع کے معاملے پر پارلیمانی رہنما کل پیپلز پارٹی کی نو تجاویز پر سوچ بچار کریں گے۔

تفصیلات کے مطابق تمام پارلیمانی رہنما فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع کے معاملے پر ایک بار پھر کل سر جوڑیں گے، اسپیکرقومی اسمبلی ایازصادق نے میڈیا سے غیر رسمی گفتگو میں کہا میں نے پیپلزپارٹی کے مسودے کی کاپی حکومت تک پہنچا دی ہے، کل کی میٹنگ میں پی پی پی کی تجاویز پر تبادلہ خیال ہوگا۔

ایاز صادق کا کہنا ہے کہ تمام جماعتیں پیپلزپارٹی کی تجاویز پر اپنی اپنی آراء دیں گی، ہر جماعت سمجھتی ہے ملک حالت جنگ میں ہے، موجودہ حالات میں سیاسی جماعتیں فوجی عدالتوں کی ضرورت کو سمجھتی ہیں، فوجی عدالتوں کی مدت اوراختیارات پر پیپلز پارٹی کےاعتراض کےباعث معاملہ رواں سال جنوری سے تاحال حل نہیں ہوسکا۔


مزید پڑھیں : فوجی عدالتوں کے مخالف نہیں، 9 مطالبات پیش کردیے، زرداری


خیال رہے کہ پیر کو سابق صدر آصف زرداری نے فوجی عدالتوں کے قیام میں توسیع سے متعلق نو تجاویز دی تھیں، اپنے 9 نکات کی تفصیلات بتاتے ہوئے آصف علی زرداری کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی دہشت گردی کے خلاف لڑتی رہی ہے اورلڑتی رہے گی تاہم فوجی عدالتوں کے حوالے سے ہمارے کچھ مطالبات جو آج پریس کانفرنس کے ذریعے حکومت کے سامنے رکھ رہے ہیں جو درج ذیل ہیں۔

1- فوجی عدالتوں میں توسیع ایک سال کے لیے کی جائے۔

2- گرفتار ملزمان کو 24 گھنٹے کے اندر مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا جائے۔

3- ملزم کو وکیل اور کونسل کا حق حاصل ہوگا۔

4- دہشت گردی کی وضاحت کے لیے قانون بنایا جائے جس میں دہشت گردی کی تعریف وضع کی جائے۔

5- ملزم کو ریمانڈ کے لیے پیش نہ کیا جائے تووہ لاپتا افراد میں شامل ہو گا۔

6- چیف جسٹس فوجی عدالتوں کے لیے ججز کی نامزدگی کریں۔

7- فوجی عدالت کی سربراہی فوجی افسر کےساتھ سیشن یا ایڈیشنل جج کرے۔

8- ملزم کو ہائی کورٹ میں اپیل کا حق ہوگا۔

9- آئین کا حصہ قانون شہادت بھی لاگوہوگا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں