The news is by your side.

Advertisement

کراچی کے ایک گوٹھ کے لوگوں نے کرونا کا دل چسپ علاج ڈھونڈ لیا

کراچی: شہر قائد کے علاقے ملیر کے میر ہزار خان جوکھیو گوٹھ کے باسیوں نے کرونا وائرس کا دل چسپ علاج ڈھونڈ لیا۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق کراچی کے ضلع ملیر کے علاقے میر ہزار خان جوکھیو گوٹھ کے تمام مردوں اور بچوں نے کرونا وائرس سے بچنے کے لیے سر منڈوا لیے۔

علاقے کے 80 سے زائد مردوں اور بچوں کے سروں پر استرا پھروا لیا گیا، بعض بچوں کو پکڑ کر زبردستی ان کی ٹنڈ کرائی گئی، سر منڈوانے کے لیے گوٹھ کے لوگوں نے شہر سے خصوصی طور پر کرائے پر ایک حجام کو بلایا۔

میر ہزار خان جو کھیو گوٹھ کے باسیوں کا کہنا تھا کہ سر منڈوانے کا سلسلہ جاری رہے گا، گوٹھ کے سبھی مردوں اور بچوں کی ٹنڈ کرائی جائے گی۔ انھوں نے دعویٰ کیا کہ سر منڈوانے سے کرونا وائرس سے بچ سکتے ہیں۔

کراچی کے علاقے ملیر کے گوٹھ میر ہزار خان جوکھیو میں حجام اپنے کام میں مصروف ہے

علاقے کے ایم پی اے نے بھی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ یہاں لوگ تیزی سے سر منڈوا رہے ہیں اور ان کا خیال ہے کہ اس طرح وہ وائرس سے محفوظ رہ سکیں گے۔ تاہم یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ سر منڈوانے سے کرونا وائرس سے بچاؤ کیوں کر ممکن ہو سکے گا۔

خیال رہے کہ اس بات کا امکان ہے کہ سر کے بالوں کی وجہ سے کرونا وائرس آسانی سے پھیل سکتا ہو، تاہم اس نکتے کے بارے میں کہ ٹنڈ کرانے سے انسان کی قوت مدافعت میں اضافہ ہو سکتا ہے، طبی ماہرین ہی کچھ بتا سکتے ہیں۔

تشویش ناک امر یہ ہے کہ گوٹھ کے افراد کے سر ایک ہی استرے سے منڈوائے گئے، جس سے ہیپاٹائٹس سی جیسے دیگر مہلک امراض کی منتقلی کا قوی خدشہ ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں