The news is by your side.

Advertisement

میکسیکو کی سرحد پر گلابی رنگ کے جھولے لگادئیے گئے

واشنگٹن: کیلیفورنیا یونیورسٹی میں آرکیٹیچر کی پروفیسر نے امریکا اور میکسکو کی سرحد کے درمیان گلابی رنگ کے جھولے لگائے دئیے جن پر دونوں ممالک کے بچے جھولا جھول کر لطف اندوز ہوتے ہیں۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ممالک کے درمیان سرحدوں پر فوجی مورچے اور اسلحے سے لیس سیکیورٹی اہلکار تو تعینات ہوتے ہی ہیں لیکن دنیا میں امریکا اور میکسیکو ایسے ملک بھی ہیں جن کی حدود پر بچوں کے لیے جھولے لگادئیے گئے ہیں۔

سرحدی دیوار پر لگائے گئے سی ساس (جھولے) کے ایک طرف امریکن بچے بیٹھتے ہیں اور دوسری طرف میکسیکن جھولے لگانے کا مقاصد سرحد پر آہنی دیوار کی تعمیر کے خلاف احتجاج کرنا ہے جس کے لیے امریکی عدالت نے حال ہی میں رقم مختص کرنے کا حکم دیا ہے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ انسٹاگرام پر مشہور ہونے والی ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ امریکا اور میکسیکو سے تعلق رکھنے والے ہر عمر کے لوگ جھولا جھول کر انجوائے کررہے ہیں۔

خاتون پروفیسر کا کہنا ہے کہ اس اقدام سے سرحدی دیوار بنانے کا مقصد ختم ہوجائے گا اور دونوں ممالک کے لوگ صحیح معنوں میں ایک دوسرے سے رابطے استوار کرسکیں گے۔

یاد رہے کہ میکسیکو سرحد پر دیوار بنانے کے معاملے پر صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو شدید تنقید اور مخالف کا سامنا بھی کرنا پڑا تھا تاہم چند روز قبل ہی امریکی سپریم کورٹ نے ٹرمپ کو میکسیکو کی سرحد پر دیوار بنانے کی اجازت دے دی ہے۔

میکسیکو کی سرحد پر 100 میل آہنی دیوار کی تعمیر کے لیے امریکا 2.5 ارب ڈالر خرچ کرے گا جس کا مقصد غیرقانونی طریقے سے مہاجرین کو امریکا میں داخل ہونے سے روکنا ہے۔

خیال رہے کہ اس سے قبل امریکی صدر ٹرمپ نے میکسیکو کی سرحد سے گرفتار افراد کے بچوں کو ان سے علیحدہ کردیا تھا جس کے بعد انہیں شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں