The news is by your side.

حکومت کی 100 روزہ کارکردگی، مفصل رپورٹ

اسلام آباد: تحریک انصاف کی حکومت کے سو روزہ کارکردگی سے متعلق تقریب کا انعقاد کیا گیا،  تقریب میں وزیراعظم اور وفاقی وزراء نے خطاب کیا اور حکومت کی 100 دن کی کارکردگی پر روشنی ڈالی۔

تفصیلات کے مطابق تحریک انصاف کی حکومت کے سو روزہ پلان مکمل ہونے پر تقریب اسلام آباد کے جناح کنونشن سینٹر میں منعقد کی گئی، تقریب کا آغاز تلاوت کلام پاک سے ہوا، تقریب میں وزیراعظم عمران خان کے خطابات، غیر ملکی دوروں میں کامیابیوں پر مشتمل ڈاکیومنٹری بھی دکھائی گئی۔

اس کے بعد وفاقی وزیر شاہ محمود قریشی، اسد عمر اوروفاقی مشیر برائے اسٹیبلشمنٹ شہزاد ارباب نے خطاب کیا۔

پاکستان تحریکِ انصاف کے سو 100 دن کیسے رہے

وزیراعظم عمران خان نے حکومت سنبھالنے کے بعد  پاکستان کے عوام سے وعدہ کیا تھا کہ ابتدائی دو برس انتہائی مشکل ہیں ، عوام یہ دوسال کسی طرح گزار لیں اس کے بعد ان کی حکومت کی جانب سے کیے جانے والے معاشی اقدامات کے ثمرات عوام تک پہنچنا شروع ہوجائیں گے، ان کا کہنا تھا کہ اس سفر میں ابتدائی سو دن انتہائی اہمیت کے حامل ہوں گے ۔

ابتدائی سو دن میں ہم نے دیکھا کہ وزیراعظم نے اپنی حلف برداری سے قبل ہی حکومتی معاملات میں اسراف کی روک تھام کرنے اور کفایت شعاری پر مبنی اقدامات کرنا شروع کردیے جیسا کہ حلف برداری کی تقریب کے شرکاء کو سوائے پانی کے اور کچھ پیش نہ کرنے کا حکم تھا۔

حکومت کی جانب سے ویب سائٹ پرفراہم کردہ تفصیلات

وفاقی مشیرشہزاد ارباب کی خصوصی بریفنگ


وزیر اعظم کے مشیر شہزاد ارباب نے بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ حکومت کی کارکردگی رپورٹ ویب سائٹ پراپ لوڈ کی ہے،کارکردگی رپورٹ پرعوام اپنےرائےسےہمیں آگاہ کریں۔ انہوں نے بتایا کہ خیبرپختونخوا،بلوچستان،پنجاب کی حکومتیں بھی کارکردگی سےآگاہ کریں گی۔

شہزاد ارباب کا کہنا تھاکہ وفاقی حکومت کے پاس 34 نکاتی ایجنڈا تھا جن میں سے 18نکات کومکمل کرلیا گیا ہے جبکہ 16پرتیزی سےکام جاری ہے اور امید ہے کہ وہ بھی جلد پایہ تکمیل تک پہنچیں گے۔

انہوں نے بتایاکہ بیرون ملک چھپائےگئےاثاثوں کاسراغ لگایاگیا،سوئٹزرلینڈا وربرطانیہ کےساتھ معاہدےبھی انہی نکات میں شامل ہیں۔معاہدوں سےغیرقانونی جائیداداوراثاثوں کی تفصیلات منظر ِ عام پر آئیں گی۔

معاشی ترقی کے لیے اقدامات


وزیراعظم کےمشیر برائے اسٹیبلشمنٹ شہزادارباب کا کہنا تھا کہ برآمدی صنعت کے لیے گیس اوربجلی سستی کردی ہے۔قومی اقتصادی کونسل میں قابل ترین ماہرین اقتصادیات کوتعینات کیا گیا ہے اور ایف بی آراصلاحات وجہ کامرکزرہی ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ کاروبارمیں تیزی کے لیے انقلابی اقدامات کیےگئےہیں۔ سماجی اقتصادی پروگرام پروزیراعظم خصوصی توجہ دےرہےہیں۔

معاشرتی ترقی کے لیے اقدامات


شہزاد ارباب نے مزید بتایا کہ کلین اینڈ گرین پاکستان مہم کےتحت آئندہ 5سال میں 10ارب پودےلگائےجائیں گے، جس میں صوبے وفاقی حکومت کے ساتھ شریک ہوں گے۔

تعلیمی میدان میں کی گئی پیش رفت پر روشنی ڈالتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ تعلیم تک رسائی اورمعیارپرکوئی سمجھوتہ نہیں کیاجائےگا،وزیراعظم ہاؤس کویونیورسٹی میں تبدیل کیاجارہاہے۔ ہمارا ہدف ہے کہ اسکولوں سے باہر کروڑوں بچوں کو اسکولوں میں لائیں گے۔

انہوں نے یہ بھی بتایا کہ آئندہ ماہ پہلی قومی صحت پالیسی کااعلان کردیاجائےگا۔ صوبے بھی اپنی اپنی صحت کی پالیسی بنا رہے ہیں ۔

ہم نےدرست سمت کاتعین کردیاہے۔انصاف کےآسان اورتیزحصول کے لیے اصلاحات پرکام کیا ہے اور اب ہماری کوشش ہوگی کہ جس رفتار سے ہم نے ان سو دنوں میں مسائل کے حل کے لیے اہداف مقرر کیے ہیں ، اس سے زیادہ رفتار سے ان پر عمل کرکے دکھائیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں