The news is by your side.

Advertisement

وعدہ کرتاہوں سندھ کےلوگوں کےحالات بہترکرنےکی کوشش کروں گا، وزیراعظم

سکھر : وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ 446ارب روپے کے پیکیج کی پوری تیاری کرلی گئی ہے، سندھ کے اضلاع کے پیکیج کے اثرات عوام کوملنا شروع ہوجائیں گے، وعدہ کرتاہوں سندھ کےلوگوں کےحالات بہتر کرنے کی کوشش کروں گا۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان سکھر پہنچے ، جہاں گورنر سندھ عمران اسماعیل نے ان کا استقبال کیا۔

جس کے بعد عمران خان آئی بی اے یونیورسٹی سکھر میں کامیاب جوان پروگرام کا افتتاح کیا اور چیک تقسیم کئے ، اس موقع پر وزیر اعظم کے ہمراہ وفاقی کابینہ کے وزرا ، عثمان ڈار، ثانیہ نشتر ،محمد میاں سومرو بھی موجود تھے۔

وزیراعظم عمران خان نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا اندرون سندھ آنے پر خوشی کا اظہار کرنا چاہتا ہوں، بد قسمتی سے اندرون سندھ پہلے نہیں آسکا ، اندرون سندھ پاکستان کا سب سے غریب ترین علاقہ ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ 25سال پہلے سیاست شروع کی تو پورے پاکستان کے دورے کرتاتھا، بلوچستان میں بہت غربت دیکھی، قبائلی علاقہ اب کے پی میں ضم ہوگیا ہے وہاں غربت بہت تھی، اندرون سندھ میں لوگوں کو مشکل حالات میں جیتے دیکھا، طاقت ور کمزور کے اوپر ہر قسم کا ظلم کرسکتا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ اندرون سندھ کے لوگ بہت پیچھے رہ گئے، پنجاب میں بڑے مافیا سے مقابلہ تھا اس لئےسندھ کو زیادہ وقت نہ دے سکا تھا۔

ملکی قرضوں کے حوالے سے وزیراعظم نے کہا کہ ملکی تاریخ کا سب سے بڑا قرضہ تھا، ڈھائی سال میں ہم نے کتنا قرض واپس کیا،سود ادا کیا، ن لیگ حکومت نےاپنےڈھائی سال میں20ہزارارب روپےقرض واپس کیا، موجودہ حکومت نے قرض کی مد میں35ہزارارب روپے واپس کئے، 15ہزارارب روپے پچھلی حکومت سے زیادہ واپس کیں، یہ خوشی کی بات نہیں، یہ15ہزارارب ہم عوام پر خرچ کردیتے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ عوام کیلئے بنیادی ضروریات پوری کرنے پر یہ رقم خرچ کی جاسکتی تھی، زیادہ قرضہ واپس کرنا تھا،اتنا پیسہ بھی نہیں کہ اپنے لوگوں پر خرچ کرسکیں، 446ارب روپے کے پیکیج کی پوری تیاری کی گئی، سندھ کے اضلاع کے پیکیج کے اثرات عوام کوملنا شروع ہوجائیں گے۔

انھوں نے مزید کہا کہ سندھ کے گاؤں آگے جانے کے بجائے پیچھے جارہے ہیں، جب حکومت میں آئے تو پاکستان پر تاریخی قرضہ تھا، پیکیج کےذریعےکوشش ہے نوجوانوں کو اپنے پیروں پر کھڑا کریں۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کوئی ڈیری فارمزبنارہےہیں اورکسی کی کپڑے کی دکان ہے، جو کاروبار کرنا چاہے حکومت اس سے تعاون کرے گی۔

عمران خان نے مزید کہا کہ ملک میں تھوڑے سے کھیلوں کے گراؤنڈ ہے،نیوزی لینڈ کی آبادی50سے60لاکھ کے قریب ہے اور پاکستان کی آبادی22کروڑ ہے، نیوزی لینڈ میں زیادہ کھیلوں کےگراؤنڈ ہیں، ہماری ٹیم نیوزی لینڈ گئی تو ہار گئی،لوگوں نے کہا اتناساجزیرہ ہے کیسے ہارگئی۔

18ویں ترمیم سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ 18ویں ترمیم کےبعد وفاق سے سارا پیسہ صوبوں کو چلاجاتاہے،وفاق جب ساراپیسہ دےدیتا ہے تو قرض کی مد میں اسے سود بھی دیناپڑتاہے،ملک پرموجود قرض کی ادائیگی کیلئے حکومت کو قرض لینا پڑتا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ سکھر اور حیدرآباد موٹروےسےسندھ کےلوگوں کوفائدہ ہوگا،اسدعمرنےکہاڈیم کی تعمیر سےکئی ایکڑزمین زرخیز ہوگی،لوگوں کوفائدہ ہوگا۔

لاک ڈاؤن کے حوالے سے عمران خان کا کہنا تھا کہ ملک میں ایک دم لاک ڈاؤن ہوا تو غریب طبقہ پس گیا، پوراملک بند ہونے سے دیہاڑی دارمزدور،چھابڑی والے پس گئے، شکرہےاللہ کا ہم نے پوراملک کھول دیا،بھارت کی طرح نہیں کیا، لاک ڈاؤن کی وجہ سے ایک دم پاکستان میں غربت آگئی۔

احساس پروگرام سے متعلق انھوں نے کہا کہ احساس پروگرام لائے، ڈیڑھ کروڑ خاندانوں کو تھوڑے وقت میں پیسے دیے، احساس پروگرام کے ذریعے دی گئی رقم میرٹ پر تقسیم ہوئی، کسی نے یہ نہیں دیکھا کہ یہ ہماراووٹر ہے یا یہ ہمارا صوبہ ہے یا نہیں، احساس پروگرام کے ذریعے میرٹ پر رقم تقسیم کی گئی، 180ارب روپےمیں سے33فیصدپیسہ سندھ میں خرچ کیاگیا۔

بنڈل آئر لینڈ کے حوالے سے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کراچی کے پاس ایک جزیرہ ہے جو ویسے ہی پڑاہوا ہے، اس جزیرے لئے بہت بڑامنصوبہ بنایا ہے، لوگ اس منصوبے کے لئے تیار بھی ہوگئے، اس منصوبے سے اربوں روپے آنے تھے، سندھ کے لوگوں کو نوکریاں ملنی تھیں۔

عمران خان نے کہا کہ سندھ حکومت سے کہا جو نفع بھی ہوگا وہ بھی آپ رکھ لیں،باہر سے انویسٹمنٹ آنی تھی،ملک کا فائدہ ہونا تھا ، 40ارب روپے اس جزیرےپرخرچ ہونے تھے، بیرون ملک سے انویسٹمنٹ آنےسےروپیہ مضبوط ہوتا، سندھ حکومت نے اس منصوبے کو منسوخ کردیا، سندھ حکومت سے کہوں گاکہ اس پروجیکٹ سے فائدہ تو آپ کاہی ہے، اپنے فیصلے پر نظرثانی کرے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ایک کروڑ20لاکھ خاندانوں کواحساس پروگرام میں لارہے ہیں، بہت دیرسےاندرون سندھ کے دورے پر آیا ہوں، پوراملک میرا ہے اور اپنا سمجھتا ہوں، وعدہ کرتاہوں سندھ کےلوگوں کےحالات بہترکرنےکی کوشش کروں گا۔

بلوچستان کے حوالے سے وزیراعظم نے کہا بلوچستان کیلئےپیکیج موجودہ حکومت نے دیا ہے، قبائلی اضلاع کے لئے پیکیج بھی دیے ہیں اور مزید اضافہ بھی کریں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں