ڈیم کے لیے سالانہ 30 ارب جمع کرنے ہیں، بجٹ سے ڈیم کی فنانسنگ نہیں کر سکتے: وزیرِ اعظم -
The news is by your side.

Advertisement

ڈیم کے لیے سالانہ 30 ارب جمع کرنے ہیں، بجٹ سے ڈیم کی فنانسنگ نہیں کر سکتے: وزیرِ اعظم

کراچی: وزیرِ اعظم عمران خان نے گورنر ہاوٗس سندھ میں ڈیم فنڈ ریزنگ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں ڈیمز بنانے کی کوشش ابھی نہ کی تو بہت دیر ہو جائے گی، ہمیں ملک کو موبلائز کرنا ہے کیوں کہ ڈیم کے لیے پیسا نہیں۔

تفصیلات کے مطابق وزیرِ اعظم کراچی میں گورنر ہاؤس سندھ میں ڈیم فنڈز جمع کرنے کے سلسلے میں منعقدہ تقریب سے خطاب کر رہے تھے، انھوں نے کہا کہ ہمارے پاس ڈیم کے لیے پیسا نہیں ہے جس کے لیے پورے ملک کو حرکت میں لانا ہوگا۔

انھوں نے کہا کہ ہم سیاسی لوگ صرف 5 سال کے لیے آتے ہیں، ڈیم کے لیے سالانہ 30 ارب جمع کرنے ہیں، بجٹ سے ڈیم کی فنانسنگ نہیں کر سکتے، حکومت اور لوگ ایک ہو جائیں تو قوم بن جاتی ہے پھر کوئی چیز نا ممکن نہیں ہوتی۔

ڈیم کے لیے سالانہ 30 ارب جمع کرنے ہیں، بجٹ سے ڈیم کی فنانسنگ نہیں کر سکتے: وزیرِ اعظم

عمران خان کا کہنا تھا کہ چین میں 84 ہزار ڈیم ہیں، بھارت کے پاس 5 ہزار ڈیم ہیں، جب کہ ہمارے پاس صرف 150 ہیں، ڈھائی ماہ میں ملک کا 80 فی صد پانی دریاؤں میں نکل جاتا ہے، ہمیں اس پانی کی اسٹوریج کرنی ہے۔

وزیرِ اعظم نے کہا چیف جسٹس کا کام نہیں کہ ڈیم کے لیے پیسے اکٹھے کریں، اس لیے یہ اہم کام کرنے پر ہم چیف جسٹس کو خراجِ تحسین پیش کرتے ہیں، ہم ان کے اس کام کو پایہ تکمیل تک پہنچائیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومت اکیلے ڈیم نہیں بنا سکتی، ہر پاکستانی کو شریک ہونا پڑے گا، پیسے آتے رہے تو 5 سال میں ڈیم بن جائے گا، ہم مہمند ڈیم پر بھی کام شروع کر رہے ہیں، ڈیموں سے سستی بجلی فراہم ہوگی پانی جمع ہوگا۔

کراچی

وزیرِ اعظم عمران خان نے کہا کہ کراچی پی ٹی آئی کا شہر ہے، کراچی میں سب سے زیادہ پڑھے لکھے با شعور لوگ ہیں، کراچی والے پہلے سے تیار تھے لیکن ہماری پارٹی منظم نہیں ہوپاتی تھی۔

حکومت اکیلے ڈیم نہیں بنا سکتی، ہر پاکستانی کو شریک ہونا پڑے گا، پیسے آتے رہے تو 5 سال میں ڈیم بن جائے گا: عمران خان

ہم کراچی کے لیے کام اس لیے نہیں کریں گے کہ آپ نے ووٹ دیے بلکہ اس لیے کریں گے کہ جب تک کراچی نہیں کھڑا ہوتا پاکستان آگے نہیں بڑھے گا، اندرونِ سندھ سے تو کراچی کی اونر شپ کسی کے پاس نہیں تھی لیکن اب سندھ حکومت سے مل کر کراچی کی بہتری کے لیے پورا تعاون کریں گے۔

کراچی پھر روشنیوں کا شہر بنے گا، پانی اور کچرے کے مسائل حل کریں گے، کراچی میں دہشت گردی نیچے آ گئی لیکن اسٹریٹ کرائمز بڑھ گئے، اس کی وجہ تعلیم سے دور ی ہے۔

کراچی میں بنگلہ دیشی اور افغان شہری نوکریاں نہ ملنے پر جرائم کرتے ہیں: وزیر اعظم

عمران خان نے کہا کہ بنگلا دیش سے ڈھائی لاکھ افراد اور افغانستان کے لوگ کراچی میں رہتے ہیں جنھیں نوکریاں نہیں ملتیں تو مجبوری میں کرائم کی طرف جاتے ہیں۔ بنگلا دیشیوں اور افغانیوں کے جو بچے یہاں پیدا ہوئےانھیں پاسپورٹ اور شناختی کارڈ دلوائیں گے۔

وزیرِ اعظم نے اپنے منصوبوں کے حوالے سے کہا ’کورنگی انڈسٹریل اسٹیٹ میں ری سائکلنگ پلانٹ لگا کر پانی ری سائیکل کیا جائے گا، ناردرن بائی پاس بنائیں گے، کراچی کا ماسٹر پلان بنایا جائے گا، ٹرانسپورٹ میں بہتری کے لیے شہر میں ریلوے نظام لا رہے ہیں۔‘

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں