The news is by your side.

Advertisement

وزیر اعظم عمران خان نے ذمہ دارانہ سیاحت کے فروغ کیلئے پروگرام ٹریک(TREK) کا آغاز کردیا

اسلام آباد: وزیرا عظم عمران خان نے اسلا م آباد میں منعقدہ ایک تقریب کے دوران خیبر پختونخواہ کے سیاحتی مقامات پر ایکو ٹورزم کے فروغ کےلئے عالمی بینک گروپ، نیسلے پاکستان اور خیبر پختونخواہ کے درمیان اشتراک سے Travel Responsibly for Experiencing Ecotourism in Khyber Pakhtunkhwa (TREK) پروگرام کے لوگو کو متعارف کرایا۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا،”میں وزیر اعلیٰ خیبر پختونخواہ محمود خان کو خاص طور پر مبارکباد دیتا ہوں کہ یہ جو آپ نے ورلڈ بنک اور نیسلے پاکستان کے ساتھ جو پارٹنر شپ کی ہے یہ اس پروجیکٹ کیلئے کی ہے جو میں بہت دیر سے سمجھ رہا تھا کہ پاکستان میں اس طرح کا پروجیکٹ شروع کرنا چاہیے۔”

شراکت داروں نے خیبر پختونخواہ کے سیاحتی مقامات پرسالڈ ویسٹ مینجمنٹ اورپلاسٹک ری سائیکلنگ کے ذریعے ماحولیاتی نظام کے تحفظ کےلئے مل کر کام کرنے کا عزم ظاہر کیا۔ٹریک(TREK) کی سرگرمیوں میں سیاحوں کےلئے آگاہی مہم اور کچرے کو اکٹھا کرکے ری سائیکل کرنے کےلئے مقامی افراد اور کاروباری اداروں کو تربیت فراہم کرناشامل ہے۔مقررین نے ملازمتیں پیدا کرنے میں سیاحت کے شعبے کی اہمیت پر زور دیا اور سڑکوںکی حالت بہتر بنانے، ریسکیو سروسز اور سیاحتی مقامات کی منصوبہ بندی کے ذریعے سیاحوں کو سہولیات فراہم کرنے میں خیبر پختونخواہ کے محکمہ سیاحت کے کردارکو سراہا۔

عابد مجید،صوبائی سیکرٹری سپورٹس، سیاحت اور امور نواجواناں نے کہا”Khyber Pakhtunkhwa Integrated Tourism Development (KITE) منصوبے کے تحت ٹریک ( TREK) پروگرا م کو عالمی بینک گروپ کے ساتھ قریبی شراکت داری سے نافذ کیا جارہا ہے۔ محکمہ اور اس کی سرگرمیاں ذمہ دار سیاحت کے بنیادی اصولوں پر کاربند رہتے ہوئے ورثے کا تحفظ، سیاحتی انفراسٹرکچر کی فراہمی اور سیاحتی مقامات کی ترقی کےلئے کوشاں ہے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ، ناجے بین ہاسین، کنٹری ڈائریکٹر ورلڈ بینک گروپ ، پاکستان نے کہا”عالمی بینک گروپ سیاحتی شعبے میں نوجوانوں کو روزگار کے مواقع فراہم کرنے کےلئے خیبر پختونخوا ہ اور پنجاب کی کوششوں میں تعاون کو جاری رکھنا چاہتا ہے۔آج خیبر پختونخواہ حکومت اور نجی شعبہ کے ساتھ اہم شراکت داری کے آغاز کا دن ہے اور ہمیں توقع ہے کہ ملک بھر میں ذمہ دار سیاحت کےلئے کردار ادا کرنے کےلئے مزید کارپوریٹ ادارے آگے آئیں گے۔ اس شعبہ میں ترقی اور ملازمتیں پیدا کرنے کے مواقع بہت زیاد ہ ہیں۔

اس پروگرام میں نیسلے کے کردار کو اجاگر کرتے ہوئے،ثامر شدید، سی ای او، نیسلے پاکستان نے کہا” ہمارے وژن کے تحت ہم کچرے کے مسائل سے نمٹنے کےلئے اقدامات میں تیزی لا رہے ہیں اور عالمی بینک گروپ اور خیبر پختونخواہ حکومت کے ساتھ ہماری شراکت داری اسی سمت میں ایک قدم ہے۔ہم کوڑے کو ری سائکل کرنے والی کمپنیوں اور مقامی انتظامیہ کے درمیان روابط قائم کرینگے اور اس کے علاوہ صفائی ستھرائی کی سرگرمیاں اور تربیتی پرگراموں کے ذریعے رویوں میں تبدیلی لائیں گے۔

اس سے قبل KITE اور اکنامک ری وائیٹالازیشن کے پی ( ERKP)منصوبے نے گلیات، کاغان اور کالام کی متعلقہ ترقیاتی اتھارٹیز کی حدود میں کچرے اٹھانے اورٹھکانے لگانے کےلئے 2 ایسکاویٹرز، 6 کمپکٹرز، 4 ڈمپر ٹرکس اور0 30 سے زائد کڑے دان فراہم کئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں