The news is by your side.

Advertisement

صاف پانی کمپنی کرپشن کیس، ن لیگی امیدوار قمرالاسلام اوروسیم اجمل 14 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

لاہور : نیب عدالت نے صاف پانی کمپنی کیس میں گزشتہ روز گرفتار ہونے والے ملزمان قمر الاسلام اور وسیم اجمل کو چودہ روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق لاہور کی احتساب عدالت میں صاف پانی کمپنی کیس میں گرفتار قمر الاسلام اور وسیم اجمل کو پیش کیا گیا، قمر الاسلام کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ نیب محض الزامات کی بنیاد تمام کارروائی پر کر رہا ہے۔

نیب پراسیکیوٹر وارث علی جنجوعہ نے اپنے دلائل میں کہا کہ صاف پانی کمپنی میں قمرالاسلام چیف ایگزیکٹو تھے اور وسیم اجمل آئے تو یہ اس وقت ڈائریکٹر بھی تھے جبکہ جو بھی پلانٹ لگے ان کے دور میں لگے ہیں۔

نیب پراسیکیوٹر نے قمرالاسلام کے 15 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی جسے عدالت نے منظور کرتے ہوئے ملزم قمرالاسلام اوروسیم اجمل کو چودہ دن کے جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا اور ملزمان کو نو جولائی کو پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

صاف پانی کرپشن سکینڈل میں احتساب عدالت میں پیشی کے موقع پر ملزم قمرالسلام کا کہنا تھا کہ میرے پاس صاف پانی کمپنی کا کوئی انتظامی اختیار نہیں تھا،سب سے کم بولی ایک سو گیارہ کروڑ کی تھی جسے ٹھیکہ دیا جانا تھا، ہم مذاکرات کرکے انہیں اٹھانوے کروڑ پر لے آئے اور نیب کہتا ہے مذاکرات کیوں کیے۔

دوسرے ملزم وسیم اجمل کا کہنا تھا کہ چیف منسٹر کی خواہشات کےمطابق کام نہ کرنے کےالزام پر مجھے معطل کرکے او ایس ڈی بنا دیاگیا۔

ترجمان نیب کا کہنا تھا کہ ملزم انجینئر قمر اسلام پر 84واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹس کا ٹھیکہ غیر قانونی طورپر مہنگے داموں دینے کا الزام ہے، ان پرالزام ہے کہ بدنیتی کے ذریعے بڈنگ کے کاغذات میں مالی تخمینہ بڑھا کر ظاہر کیا جبکہ سابق سی ای او ملزم وسیم اجمل پر پراجیکٹ بڈنگ کے بعد غیر قانونی طور پر صاف پانی کمپنی کے کاغذات میں تبدیلیاں کرنے کا الزام ہے جبکہ وسیم اجمل کی صاف پانی کمپنی میں بہ طورسی ای او تعیناتی بھی غیرقانونی تھی ۔

ملزم کا یہ اقدام پنجاب گورنمنٹ رولز 2014کی سخت خلاف ورزی ہے۔

خیال رہے انجینئر قمر الاسلام کو مسلم لیگ (ن) نے این اے 59 سے چوہدری نثار کے مدمقابل امیدوار نامزد کیا ہے۔

یاد رہے گذشتہ روز قمرالاسلام کو نیب لاہور نے راولپنڈی سے گرفتار کیا تھا ، ترجمان نیب کا کہنا تھا قمرالاسلام پر ایک ارب روپے سے زائد کرپشن کا الزام ہے جبکہ خوردبرد کے الزام میں صاف پانی کمپنی کے سابق سی ای او وسیم اجمل کو بھی گرفتار کرلیا گیا تھا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں