The news is by your side.

Advertisement

ن لیگی کارکنان کا اے آر وائی نیوز کے رپورٹر، کیمرہ مین اور وین آپریٹر پر تشدد

کراچی : اے آر وائی نیوز کے دفتر کے باہر مسلم لیگ ن کے کارکنان نے احتجاجی مظاہرہ کیا، مشتعل افراد نے ڈی ایس این جی وین پر لاتیں ماریں، ڈنڈے برسائے، اے آر وائی نیوز کے رپورٹر پر تشدد بھی کیا۔

اس موقع پر ن لیگی کارکنان نے اے آر وائی نیوز کے خلاف نعرے لگائے اور اے آر وائی نیوز کی ڈی ایس این جی وین پر لاتیں ماریں اور ڈنڈے برسائے۔

کارکنان نے اے آر وائی نیوز کے خلاف سخت نعرے لگائے جس میں کہا گیا ’’یہودیوں کا ایجنٹ اےآر وائی‘‘لیگی کارکنان نے اےآر وائی نیوز کے نمائندے چاند نواب کو زدوکوب بھی کیا۔

اس حوالے سے ملک بھر میں صحافیوں کی مختلف تنظیموں کی جانب سے اے آر وائی نیوز پر حملے کی شدید الفاظ میں پرزور مذمت کی گئی اور ملوث افراد کیخلاف قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا گیا۔

نائب صدرپی ایف یوجے لالہ اسد پٹھان نے کہا کہ ن لیگ کے غنڈوں کا اے آر وائی نیوز کی ٹیم حملہ قابل مذمت ہے رپورٹر پر تشدد دہشت گردی کے مترادف ہے۔

لالہ اسد پٹھان نے کہا کہ میڈیا کےاداروں اور ورکرز پر حملہ کھلی دہشت گردی ہے، سندھ حکومت فوری ن لیگی دہشت گردوں کو گرفتار کرے۔

نائب صدرپی ایف یوجے کا اپنے بیان میں کہنا تھا کہ اےآر وائی نیوز کو سچ دکھانے کی سزا دی جارہی ہے ، لیگی قائدین پہلے دن سے اے آر وائی نیوز کےخلاف زہر اگل رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ میڈیا سمیت اداروں کو ہراساں کرنا ن لیگ کا وطیرہ رہا ہے، عدلیہ میڈیا کے اداروں اور صحافیوں پر تشدد کا نوٹس لے، اے آر وائی نیوز کے ساتھ ملک بھر کی صحافتی تنظیمیں کھڑی ہیں۔

علاوہ ازیں اے آر وائی نیٹ ورک کے صدر اور سی ای او سلمان اقبال نے دفتر کے باہر مظاہرے اور ملازمین پر تشدد کے واقعے پراظہار افسوس کیا ہے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ یہ سب ٹھیک نہیں ہوا ، رپورٹنگ کرنا ہمارا کام ہے نئی حکومت نئے قوانین۔

Comments

یہ بھی پڑھیں