The news is by your side.

Advertisement

ٹکٹوں کی بندر بانٹ: ن لیگ کی خواتین کارکنان نظر انداز کرنے پر سراپا احتجاج

لاہور : مسلم لیگ نون کی خواتین کارکنوں نے آئندہ عام انتخابات میں مخصوص نشستوں پر ٹکٹیں نہ ملنے کے خلاف ماڈل ٹاؤن لاہور دفتر کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا، مظاہرین نے پارٹی قیادت پر ٹکٹوں کی تقسیم میں اقرباء پروری کا الزام عائد کیا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کے بعد نون لیگ کی خواتین کارکنان بھی قومی و صوبائی اسمبلیوں میں مخصوص نشستوں پر نظر انداز کئے جانے پر پھٹ پڑیں۔

نون لیگ لاہور آفس کے باہر ہونے والے احتجاج میں گفتگو کرتے ہوئے خواتین کارکنوں نے الزام عائد کیا کہ تکالیف انہوں نے اٹھائیں اور اسمبلی میں مخصوص بیگمات کو نمائندگی ملی۔

انہوں نے کہا کہ کسی نےسہیلی تو کسی نے بیوی کو ٹکٹ دلوایا، کارکن ورکر کل بھی رلتا تھا اور ورکرآج بھی رلتا ہے، لیگی خواتین کا کہنا تھا کہ میرٹ نظرنہیں آتی،پارٹی میں پیرا شوٹرآگئے ہیں، اس موقع پر محدود وسائل رکھنے والی سابق رکن اسمبلی فرزانہ بٹ نے آزاد حیثیت سے الیکشن لڑنے کا بھی اعلان کردیا۔

اس حوالے سے اے آر وائی نیوز کے پروگرام آف دی ریکارڈ میں گفتگو کرتے ہوئے ن لیگ کی رہنما نسرین ملک نے کہا کہ ایک ایک گھر میں تین سے چار ٹکٹیں دی گئی ہیں، اپنی لاڈلیوں اپنی سہیلیوں اور گرل فرینڈ کو نوازا گیا ہے۔

یاد رہے کہ میرٹ کا دم بھرنے والی جماعت ن لیگ نے بھی ٹکٹوں کی تقسیم میں مخلص اور دیرینہ کارکنان کو نظر انداز کیا، ذرائع کا کہنا ہے کہ خواتین کی مخصوص نشستوں کیلئے بیگمات، بھانجیاں، بھتیجیاں، دوست، کزنز، گھر میں کام کرنے والی، سیکریٹریز، سوشل میڈیا پر فوٹیج اپ لوڈ کرنے والی خواتین تک کو پارٹی امیدوار نامزد کر دیا گیا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں