The news is by your side.

Advertisement

کراچی: نجی اسکول، کالجز اور ٹیوشن سینٹرز بھی ایف بی آر کے ریڈار پر آ گئے

کراچی: شہر قائد میں نجی اسکول، کوچنگ سینٹرز اور پری نرسری ٹریننگ سینٹرز بھی فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے ریڈار پر آ گئے۔

تفصیلات کے مطابق ایف بی آر نے ٹیکس نہ دینے والے تعلیمی اداروں کی تفصیلات حاصل کر لیں، نجی اسکولوں، کالجز اور ٹیوشن سینٹرز کو نوٹس جاری کر دیے گئے۔

ایف بی آر حکام کا کہنا ہے کہ رجسٹرڈ نہ ہونے والے تعلیمی اداروں کو نوٹس جاری کر دیے ہیں، کراچی میں 6 ہزارسے زاید اسکول ٹیکس نہیں دیتے۔

حکام کے مطابق عملے کی تنخواہوں سے کٹوتی ہوتی ہے نہ ہی ظاہر کی جاتی ہے، اے او لیول کے ٹیوشن سینٹرز اور اسکول ٹیکس ادا نہیں کرتے۔

یہ بھی پڑھیں:  ایف بی آر نے کراچی کے ڈاکٹرز اور سرجنز کے گرد گھیرا تنگ کر دیا

موصولہ اطلاعات کے مطابق کراچی میں 6 ہزار 324 اسکولوں، کالجز اور ٹیوشن سینٹرز کو نوٹس جاری کیے گئے ہیں، بتایا گیا ہے کہ اچھی آمدن کے باوجود نجی تعلیمی ادارے ایف بی آر میں رجسٹرڈ نہیں ہیں۔

ایف بی آر کا کہنا ہے کہ میٹرک اور انٹر بورڈ سے ان اداروں کے بارے میں معلومات حاصل کی گئیں، ٹیکس دائرہ کار بڑھانے کے لیے پرائیوٹ اسکولز ایسوسی ایشن سے رابطے میں ہیں۔

یاد رہے کہ اس سے قبل فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے کراچی کے ڈاکٹرز اور سرجنز کے گرد بھی گھیرا تنگ کرتے ہوئے کہا تھا کہ ڈاکٹرز اور سرجنز کا بڑے پیمانے پر ٹیکس ادا نہ کرنے کا انکشاف ہوا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  کراچی: گارمنٹس کی دکانیں بھی ایف بی آر کے ریڈار پر آ گئیں

ایف بی آر کی جانب سے ایک دستاویز جاری کی گئی جس میں کہا گیا کہ پی ایم ڈی سی میں رجسٹریشن کے باوجود ڈاکٹرز ٹیکس ادا نہیں کر رہے۔

اس سلسلے میں ایف بی آر کی جانب سے شہر کے 30 بڑے معروف اسپتالوں کو نوٹس جاری کیا گیا، جس میں کہا گیا کہ ڈاکٹروں کی آمدن پر مبنی تفصیلات فوری فراہم کی جائیں۔

ایف بی آر کی طرف سے کراچی میں ٹیکس ادا نہ کرنے والی گارمنٹس شاپس اور بوتیکس مالکان کو بھی نوٹس جاری کیے جا چکے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں