پی ٹی آئی اور ایم کیو ایم میں معاہدہ طے پا گیا، ساتھ چلنے کا عزم
The news is by your side.

Advertisement

پی ٹی آئی اور ایم کیو ایم میں حکومت سازی کا معاہدہ طے پا گیا

اسلام آباد: پی ٹی آئی کے سینئر رہنما جہانگیر ترین نے کہا ہے کہ ایم کیوایم سے معاہدہ ہوگیا ہے.

ان خیالات کا اظہار انھوں نے ایم کیو ایم وفد کی تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان سے ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا.

جہانگیر ترین نے کہا کہ 9 آزاد ایم این ایز پی ٹی آئی میں شامل ہوگئے ہیں، فاٹا اراکین سے بات چل رہی ہے.

ان کا کہنا تھا کہ 28 میں سے 25 آزادایم پی ایزپی ٹی آئی میں آگئے ہیں، اب ایم کیوایم سے معاہدہ طے پا گیا.

جہانگیر ترین کا کہنا تھا کہ کراچی میں بھی ایم کیوایم سےمثبت مذاکرات ہوئے تھے، ایم کیوایم نےرابطہ کمیٹی اورپی ٹی آئی نےکورکمیٹی سے مشاورت کی.

ان کا کہنا تھا کہ ایم کیوایم وفد کی خان صاحب سے ملاقات بہت مثبت رہی. کراچی کے لئے اسپیشل فنانشل پیکج دیں گے.زیادہ سے زیادہ یونیورسٹیاں بنائیں گے.


مزید پڑھیں: ایم کیو ایم کے وفد کی عمران خان سے ملاقات


 تمام شک وشبہات کوسامنےرکھتے ہوئےبات کی ہے: خالد مقبول صدیقی

اس موقع پر ایم کیو ایم کے کنوینر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ  پی ٹی آئی اورایم کیوایم میں جومعاہدہ طے ہوا، وہ آئینی تقاضاہے۔

انھوں نے کہا کہ عمران خان نے جمہوریت کوآگےلی کر چلنےکاکہا تھا، یہ اس کی کڑی ہے، آج بھی کراچی پاکستان کےریونیوکا65سے70فیصدحصہ دیتاہے۔

خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ بلدیاتی نظام کےحل کے لئے مل کر جدوجہد کریں گے، کراچی میں دوبارہ مردم شماری کاجائزہ لیاجائےگا۔ مضبوط مالیاتی، سیاسی خودمختاری، بلدیاتی نظام کے لئےجدوجہدکریں گے۔ 

ایم کیو ایم کے کنوینر کا کہنا تھا کہ کراچی آپریشن کابھی جائزہ لیاجائےگا، کراچی آپریشن کوبھی منطقی انجام تک پہنچایاجائےگا، کچھ چیزیں باقی ہیں ان پربھی بات چیت جاری ہے۔

انھوں نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کےمینڈیٹ کااحترام ہے،ہمارابھی احترام کیاجائے، تمام شک وشبہات کوسامنےرکھتے ہوئےبات کی ہے۔

معاہدے کی تفصیلات

ایم کیوایم اور پی ٹی آئی میں 9نکاتی سمجھوتہ طے پاگیا، جس کے تحت کراچی میں مردم شماری پرقومی اسمبلی کی قرارداد پر عمل کیا جائے۔

سمجھوتے کے مطابق کراچی مردم شماری پرسی سی آئی کے فیصلے پرفوری عمل کیا جائے گا، پی ٹی آئی سندھ، پنجاب بلدیاتی نظام پر ایم کیوایم پٹیشن کی حمایت کرے گی۔

دونوں جاعتوں میں طے پایا ہے کہ تمام اسٹیک ہولڈرزکے ساتھ بیٹھ کر کراچی آپریشن کا جائزہ لیا جائے گا، حکومت کی تمام تعیناتیاں خود مختارقابلیت نظام کےتحت کی جائیں گی۔ 

ساتھ ہی آکٹرائے کی مد میں وعدے کے مطابق زرتلافی یقینی بنائی جائے گی، کراچی سمیت شہری سندھ کے لئے فوری طورپرمالی پیکج کا اعلان کیاجائے گا، کے پی طرزپر سندھ میں پولیس اصلاحات کے لئے مشترکہ کوششیں ہوں گی۔

سمجھوتے کے تحت سندھ پولیس کوغیرسیاسی بنانے کی قانونی جدوجہد کی جائے گی، حیدرآباد میں عالمی طرز پر یونیورسٹی قائم کی جائےگی، ایم کیوایم کی نشاندہی پرکسی بھی حلقےکاالیکشن آڈٹ کرایا جائے گا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں