The news is by your side.

Advertisement

گزشتہ دس برس میں سرکاری خزانے سے ذاتی دوروں پر آنے والے اخراجات وصول کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد: حکومت نے 2008 سے 2018 تک ذاتی سفری اخراجات سابق حکمرانوں سے وصول کرنے کا فیصلہ کر لیا۔

تفصیلات کے مطابق معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے خصوصی پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ سابق حکمرانوں نے پی آئی اے کو چنگچی کی طرح استعمال کیا، پی آئی اے کے پائلٹس ان کےذاتی ڈرائیور کی ڈیوٹیاں ادا کرتے رہے۔

انھوں نے کہا کہ وی آئی پی پروازں پر ایک ارب چھ کروڑ سے زائد کا نقصان ہوا، اہل خانہ کے لیے طیارے استعمال کئے گئے، لندن میں میاں صاحب جتنے دن زیرعلاج رہے، اس جگہ کو کیمپ آفس بنا دیا گیا، طیارہ لندن میں کھڑا رکھنے سے پی آئی اے کوکروڑوں روپے کا نقصان ہوا۔

بھٹو زندہ ہے کا نعرہ لگانے کے لئے پی آئی اے بے دردی سے سکھر ڈائیورٹ ہوتی رہی، پی آئی اے کے ساتھ ایسا سلوک کیا گیا، جو کرائے کی سائیکل کے ساتھ بھی نہیں کیاجاتا، سیاسی بنیاد پر بلاجواز بھرتیاں کی گئیں، ادارے کے تینتیس دفاتر یونین کے قبضے میں ہیں۔

مزید پڑھیں: حکومت کا اپوزیشن کے خلاف سخت لائحہ عمل اپنانے کا فیصلہ

انھوں نے کہا کہ سابق صدر ممنون حسین کے دہی بھلے کا ستائیس کروڑ کا بل بھی عوام نے ادا کیا، دہی بھلے کھانے کا 27کروڑ کابل بھی عوام نے ادا کیا.

انھوں نے مزید کہا کہ وزیراعظم عمران خان کا دورہ امریکا انتہائی اہم اور کامیاب رہا، عالمی سطح پر پاکستان کا مثبت امیج اجاگر ہوا، کل ایک سیاسی ٹولے نے یوم سیاہ کی آڑ میں انتشارپھیلانے کی کوشش کی، عوام نےان کے منہ پرسیاہی مل دی.

انھوں نے کہا کہ وزیر اعظم کے اقدامات سے پی آئی اے اخراجات میں 20 فیصد کمی آئی، دو ماہ کے اندر پی آئی اے کو 46 ملین کی آمدن ہوئی، امید ہے کہ پی آئی اے کی انتظامیہ خسارہ ختم کرکے آمدنی کی طرف بڑھے گی.

Comments

یہ بھی پڑھیں