The news is by your side.

Advertisement

پانی کو مضر صحت اجزا سے پاک کرنے کا آسان طریقہ

کیا آپ جانتے ہیں پانی کو مضر صحت اجزا سے پاک کر کے اسے کس طرح پینے کے قابل بنایا جاسکتا ہے؟

اقوام متحدہ کی جاری کردہ رپورٹس کے مطابق 164 ملین افراد افریقہ، 134 ملین ایشیا اور 25 ملین افراد لاطینی امریکا میں گندے پانی سے ہونے والی بیماریوں کے خطرے کا شکار ہیں۔

ماہرین کے مطابق دنیا بھر میں ہر سال 3.4 ملین افراد گندے پانی کے باعث پیدا ہونے والی بیماریوں سے ہلاک ہوجاتے ہیں۔ ان بیماریوں میں ٹائیفائیڈ، ہیپاٹائٹس، ڈائریا اور ہیضہ شامل ہیں۔

مزید پڑھیں: آبی آلودگی سے دنیا بھر کی آبادی طبی خطرات کا شکار

اس کی سب سے بڑی وجہ پینے کے پانی میں انسانی فضلہ کی ملاوٹ ہے۔

پاکستان میں بھی 80 فیصد بیماریاں پینے کے گندے پانی کے باعث پیدا ہوتی ہیں۔ ان بیماریوں میں مبتلا 40 فیصد افراد موت کا شکار ہوجاتے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ پانی کو صاف کرنے کا ایک ایسا طریقہ ہے جو نہ ہی تو زیادہ سائنسی ہے اور نہ ہی اس میں زیادہ پیسہ خرچ ہوگا۔ وہ طریقہ یہ ہے کہ بوتلوں میں پانی بھر کر انہیں سورج کی تیز روشنی میں رکھ دیا جائے۔

تیز دھوپ پانی سے تمام زہریلے اور مضر صحت اجزا کو ختم کر کے پانی کو پینے کے لیے محفوظ بنا دیتی ہے۔ اس کے لیے پانی کو کم از کم 6 گھنٹے تیز دھوپ میں رکھنا ضروری ہے۔

مزید پڑھیں: پانی کی بچت کرنے والا نلکا

لیکن خیال رہے کہ اس کام کے لیے پلاسٹک کی عام بوتلیں نہ استعمال کی جائیں۔ تیز دھوپ میں پلاسٹک پگھل کر اس کے کچھ ذرات پانی میں شامل ہوسکتے ہیں جو انسانی صحت کے لیے انتہائی مضر ہے۔ اس کے لیے موٹے پلاسٹک سے بنے تھرماس یا شیشے کے برتن استعمال کیے جاسکتے ہیں۔

یہ طریقہ دنیا کے کئی ممالک میں منظم انداز سے استعمال کیا جارہا ہے۔ خاص طور پر افریقی ممالک میں اسی طریقے سے پانی کو صاف کر کے پینے کے قابل بنایا جارہا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں