The news is by your side.

روسی صدر پیوٹن قاتلانہ حملے میں بچ نکلے

ہسپانوی اخبار نے اپنی ایک حالیہ رپورٹ میں روس کے صدر ولادیمیر پیوٹن پر قاتلانہ حملے میں بچ نکلنے کا دعویٰ کیا ہے۔

’یورو ویکلی نیوز‘ کے مطابق ولادیمیر پیوٹن پر حملے کی معلومات ٹیلی گرام پر جنرل ’جی وی آر‘ کے نام سے موجود چینل سے ریلیز کی گئیں تاہم اس میں حملے کا مقام نہیں بتایا گیا۔

ٹیلی گرام چینل کے مطابق روسی صدر کی گاڑی (لیموزین) کے اگلے ٹائر کو سڑک پر نصب دھماکا خیز مواد سے متاثر کیا گیا جس کے بعد گاڑی کے انجن سے دھواں اٹھنے لگا۔

مزید پڑھیں: یوکرینی شہریوں کے لیے روسی صدر پیوٹن کا بڑا قدم

ولادیمیر پیوٹن اس حملے میں محفوظ رہے اور انہیں فوری طور پر قافلے میں موجود بلڈ پروف گاڑی میں بیٹھا کر ان کی سرکاری رہائش گاہ منتقل کیا گیا۔ حملے کے بعد متعدد گرفتاریاں بھی عمل میں لائی گئیں۔

واضح رہے کہ فروری میں یوکرین پر حملے کے بعد سے روسی صدر کی صحت اور ان کی زندگی کو لاحق خطرات کی افواہیں سامنے آتی رہی ہیں۔ 2017 میں انہوں نے پانچ بار قاتلانہ حملے میں بچ نکلنے کا اعتراف کیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں