قندیل بلوچ قتل کیس میں نیا موڑ -
The news is by your side.

Advertisement

قندیل بلوچ قتل کیس میں نیا موڑ

عدالت نے والدین کے بیانِ حلفی کے باوجود وسیم کی درخواستِ ضمانت خاری کردی

ملتان: عدالت نے قندیل بلوچ قتل کیس کے مرکزی ملزم وسیم کی درخواست ضمانت خارج کردی، مقتولہ کے والدین نے سیشن کورٹ میں معافی نامہ بھی جمع کروایا۔

تفصیلات کے مطابق قندیل بلوچ قتل کیس کی سماعت ملتان کی سیشن کورٹ میں ہوئی جہاں مقتولہ کے والدین نے عدالت میں بیان حلفی جمع کرایا جس میں کہا گیا تھا کہ ہم نے بیٹے کو معاف کردیا اگر عدالت چاہے تو ملزم کو ضمانت پر رہا کردے۔

بیانِ حلفی میں کہا گیا کہ اگر عدالت مقدمے کے مرکزی ملزم وسیم کی ضمانت منظور کردیتی ہے تو انہیں کوئی اعتراض نہیں، سیشن جج نے والدین کی جانب سے بیان جمع ہونے کے باوجود وسیم کی درخواست ضمانت کو مسترد کردیا۔

قبل ازیں مقتولہ کے والدین اپنے صاحبزادے کو بچانے اُس کے حق میں جج کے روبرو پیش ہوکر عدالت میں بیان دے چکے ہیں۔

مزید پڑھیں: قندیل بلوچ قتل کیس : مفتی عبدالقوی سینٹرل جیل ملتان سے ضمانت پر رہا

یاد رہے کہ معروف ماڈل اور شوبز اسٹار قندیل بلوچ 2016 میں جب اپنے والدین سے ملاقات کے لیے آئیں تو رات کو سوتے ہوئے اُن کے بھائی وسیم نے گلا گھونٹ کر قتل کردیا تھا۔

قتل میں ملوث مرکزی ملزم آبائی علاقے سے فرار ہوگیا تھا مگر پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے اُسے گرفتار کیا تو تفتیش کے دوران اُس نے واردات کا اعتراف کیا۔

وسیم کا اپنے اعترافی بیان میں کہنا تھا کہ قندیل بلوچ اہل خانہ اور خاندان کے لیے رسوائی کا سبب بن رہی تھی البتہ جب عدالت نے تین ملزمان پر فرد جرم عائد کی تو انہوں نے صحت جرم سے انکار کردیا تھا۔

مقتولہ کے والد نے مفتی عبدالقوی کو بیٹی کے قتل کا قصور وار ٹھہراتے ہوئے اُن پر الزام عائد کیا تھا جس کے بعد انہیں بھی شامل تفتیش کیا گیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں