The news is by your side.

Advertisement

انٹیلی جنس بیورو نے قصور واقعے کی تحقیقاتی رپورٹ مکمل کرلی

لاہور : انٹیلی جنس بیورو نے قصور واقعے کی تحقیقاتی رپورٹ مکمل کرلی ہے، وزیراعلیٰ کو بھجوائی گئی رپورٹ میں حالات کا ذمہ دار پولیس کو قرار دیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق آئی بی نے اپنی رپورٹ وزیراعلیٰ پنجاب کو بھجوادی، رپورٹ میں حادثے کا ذمہ دار مقامی پولیس کو قرار دیا گیا ہے، رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جب سائل ثبوت کے ساتھ پولیس حکام کے پاس آئے تو حکام کو اسے ایک سو چوؤن یا چوبیس ٹو کی شکل دینا چاہیے تھی۔

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اگر کوئی مدعی نہیں تھا تو پولیس اس ویڈیو پر خود مدعی کیوں نہ بنی، پولیس نے جان بوجھ کر حالات سے راہ فرار اختیار کی۔

دوسری جانب لاہور کی انسداد دہشتگردی عدالت نے قصور ویڈیو اسکینڈل کیس کے مزید سات ملزمان کو ستائیس روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق حسیم عامر، نسیم شہزاد، صابر علی، عبدالمنان وٹو، عثمان خالد اور رائے بشارت کو سخت سیکیورٹی میں لاہور کی انسداد دہشت گردی کی عدالت لایاگیا،  متاثرین کے وکیل نے پولیس پر الزام لگایا کہ پولیس نے مقدمے کے دو مرکزی ملزمان تسنیم الرحمان اور عتیق الرحمان کو فرار کرا دیا۔

گزشتہ روز انسداد دہشتگردی کی عدالت نے مقدمے میں گرفتار پانچ ملزمان کو اٹھائیس روز کے ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کیا تھا، ریمانڈ ختم ہونے کے بعد کیس میں گرفتار تمام ملزمان کو ایک ساتھ عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں