The news is by your side.

فیفا ورلڈ کپ 2022: غیر ملکی براڈ کاسٹرز کو لفظ ’قطر‘ کہنا مشکل ہوگیا

دوحا: فیفا ورلڈ کپ 2022 کا آج سے قطر میں آغاز ہونے جارہا ہے اور دنیا بھر میں فٹبال کے دیوانوں کا جوش و جذبہ آسمان چھونے لگا ہے۔

قطر اس بین الاقوامی مقابلے کی میزبانی کرنے والا مشرق وسطیٰ کا اولین، پہلا عرب اور مسلمان ملک ہے جہاں فیفا ورلڈ کپ کی میزبانی کے ساتھ کئی تنازعات بھی جڑے ہیں۔

تارکین وطن سے اسٹیڈیمز کی تعمیر کروانے سے لے کر، اسٹیڈیمز میں الکوحل کی فروخت پر پابندی، لباس کے بارے میں ہدایات اور افتتاحی تقریب کے لیے کئی فنکاروں کے منع کردینے تک اب تک بے شمار تنازعات سامنے آچکے ہیں جن پر دنیا بھر سے منفی اور مثبت ردعمل موصول ہورہا ہے۔

اب عالمی میڈیا نے اس حوالے سے ایک اور مسئلے کی طرف اشارہ کیا ہے جو خاصا دلچسپ ہے، اور وہ یہ کہ غیر ملکی صحافیوں اور براڈ کاسٹرز کو لفظ ’قطر‘ کہنے میں شدید مشکل کا سامنا ہے۔

بے شمار پروگرامز میں انگریزی بولنے والے براڈ کاسٹرز قطر کا غلط تلفظ ادا کرتے دکھائی دیے جس کے بعد امریکی نشریاتی ادارے سی این این نے ایک باقاعدہ رہنما ویڈیو جاری کردی۔

قطر میں بے شمار مقامی آن لائن پلیٹ فارمز کے بانی خلیفہ الہارون کا کہنا ہے کہ اکثر براڈ کاسٹرز قطر کو، کیتر یا گٹر کہہ رہے ہیں، انہیں اندازہ نہیں ہورہا کہ اس لفظ کو کس طرح ادا کرنا ہے اور کہاں زور دینا ہے۔

خلیفہ الہارون کے مطابق قطر کے تینوں حروف انگریزی میں استعمال نہیں کیے جاتے لہٰذا وہ انگریزی بولنے والے براڈ کاسٹرز کی پریشانی سمجھ سکتے ہیں، ضروری نہیں کہ وہ اہل زبان کی طرح قطر بولیں، وہ ان تینوں حروف کو استعمال کرتے ہوئے، حلق پر زور لگائے بغیر بھی یہ لفظ ادا کر سکتے ہیں جو سننے میں اصل جیسا ہی معلوم ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ سی این این کی اس ویڈیو کے بعد وہ امید کرتے ہیں کہ اب عالمی میڈیا میں وہ قطر کا لفظ صحیح طور پر ادا کیے جاتے ہوئے سن سکیں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں