The news is by your side.

روس نے نیٹو اثاثوں کے قریب سپر سانک میزائل منتقل کر دیے

روس نے جدید ترین ہائپرسونک میزائلوں سے لیس جنگی طیارے ملک کے کیلینن گراڈ کے علاقے میں تعینات کر دیے جو یورپی یونین کے رکن ممالک اور نیٹو کے اثاثوں کے قریب ہیں۔

روس کی وزارت دفاع نے کہا کہ کنزال ہائپرسونک میزائلوں کے ساتھ تین MiG-31 لڑاکا طیارے "اسٹریٹجک ڈیٹرنس کے اضافی اقدامات” کے حصے کے طور پر چکالوسک ایئربیس پر پہنچے ہیں اور انہیں "چوبیس گھنٹے جنگی ڈیوٹی” پر رکھا جائے گا۔

وزارت کی طرف سے جاری کی گئی ایک ویڈیو میں جنگجوؤں کو اڈے پر پہنچتے ہوئے دکھایا گیا ہے جب کہ بظاہر میزائل الگ سے فراہم کیے گئے تھے۔

کنزال میزائل کی تعیناتی یوکرین پر روس کے جاری حملے پر مغرب کے ساتھ بڑھتی ہوئی کشیدگی کے دوران سامنے آئی ہے۔

روسی فوج نے کہا کہ کنزال کی رینج 2,000 کلومیٹر (تقریبا 1,250 میل) تک ہے اور یہ آواز کی رفتار سے 10 گنا زیادہ پرواز کرتے ہیں۔

روسی صدر ولادیمیر پوتن نے 2018 میں کنزال میزائل کی نقاب کشائی کی تھے اور اسے "ایک مثالی ہتھیار” قرار دیا تھا جسے روکنا انتہائی مشکل ہے۔

ماسکو نے یوکرین کو مغربی ہتھیاروں کی فراہمی پر کڑی تنقید کرتے ہوئے امریکا اور اس کے اتحادیوں پر تنازع کو ہوا دینے کا الزام لگایا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں