The news is by your side.

Advertisement

کرونا وائرس کی ویکسین اگلے ماہ دستیاب ہوگی؟

ماسکو: روسی حکام کا کہنا ہے کہ روس میں کرونا وائرس ویکسین کی تیاری حتمی مراحل میں پہنچ گئی ہے اور یہ اگلے ماہ عوامی استعمال کے لیے فراہم کردی جائے گی۔

روسی وزیر صحت کا کہنا ہے کہ ویکسین کے کلینکل ٹرائلز جاری ہیں اور ٹرائلز کا تیسرا مرحلہ مکمل ہونے سے قبل ہی اسے عام افراد کے لیے فراہم کردیا جائے گا۔

وزیر کا کہنا ہے کہ ویکسین کے وسیع پیمانے پر استعمال کی منظوری دیے جانے کے بعد ویکسین کی مزید کلینکل ریسرچ بھی ساتھ ساتھ ہوتی رہے گی۔

حکومتی ادارے رشین ڈائریکٹ انویسٹمنٹ فنڈ کی چیف ایگزیکٹو کرل دیمتری کا کہنا ہے کہ ویکسین کے کلینکل ٹرائلز کا تیسرا مرحلہ 3 اگست سے شروع ہوگا جس میں ہزاروں رضا کار شرکت کریں گے۔

ان کے مطابق مقامی طور پر اس ویکسین کی 3 کروڑ ڈوزز تیار کی جائیں گی، لیکن چونکہ متعدد ممالک اس ویکسین کی تیاری میں دلچسپی کا اظہار کر چکے ہیں تو بین الاقوامی اشترک سے اس کی 17 کروڑ سے زائد ڈوزز تیار کی جاسکیں گی۔

خیال رہے کہ مذکورہ ویکسین روسی وزارت دفاع کے ادارہ برائے وبائی امراض اور مائیکرو بائیولوجی نے تیار کی ہے اور شخانوف یونیورسٹی اس کے کلینکل ٹرائلز کر رہی ہے۔

ویکسین ٹرائلز کے پہلے مرحلے کو کامیاب قرارد دیتے ہوئے ماہرین نے کہا تھا کہ ویکسین انسانی استعمال کے لیے محفوظ ہے۔

چند روز قبل برطانیہ، امریکا اور کینیڈا کی حکومتوں کی جانب سے الزام لگایا گیا تھا کہ روسی خفیہ ایجنسی کرونا وائرس کی ویکسین بنانے والے اداروں کی تحقیق کو ہیک کر رہی ہے اور اس کے ذریعے اپنی ویکسین بنا رہی ہے۔

اس حوالے سے روسی حکام کا کہنا ہے کہ ان کی ویکسین مغربی ممالک میں بنائی جانے والی ویکسین سے زیادہ جدید ہے اور وہ اپنی ویکسین کی ٹیکنالوجی بخوشی دیگر ممالک کے ساتھ شیئر کریں گے۔

یاد رہے کہ روس کرونا وائرس کیسز کے حوالے سے چوتھے نمبر پر ہے، اب تک ملک میں کوویڈ 19 کے پونے 8 لاکھ مصدقہ کیسز سامنے آئے ہیں اور ساڑھے 12 ہزار اموات ہوچکی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں