The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب میں آن لائن شاپنگ میں اضافہ

ریاض: کرونا وائرس کے لاک ڈاؤن کے باعث سعودی عرب میں آن لائن شاپنگ میں 400 فیصد اضافہ ہوگیا، حکام نے لاک ڈاؤن میں نرمی کر کے سحری کے وقت تک آن لائن ڈلیوری پہنچانے کی سہولت دے دی ہے۔

سعودی ویب سائٹ کے مطابق کرونا وائرس کے سبب لاک ڈاؤن اور کرفیو لگنے سے سعودی عرب میں آن لائن شاپنگ میں اضافہ ہو گیا ہے، وزارت تجارت و سرمایہ کاری کی رپورٹ کے مطابق گزشتہ دو ماہ میں آن لائن خریداری میں 400 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

آن لائن شاپنگ میں یک دم اس قدر اضافے کے باعث مختلف قسم کی 30 ہزار شکایات بھی درج کروائی گئی ہیں جن میں اکثریت سامان کی فراہمی میں تاخیرکی اطلاعات ہیں۔

وزارت تجارت و سرمایہ کاری کے ترجمان عبدالرحمٰن الحسین نے بتایا کہ کرونا وائرس کے باعث بہت سے علاقوں میں کرفیو جیسی صورتحال غیر معمولی ہے اور یہی وجہ سامان کی ترسیل میں تاخیر میں آڑے آرہی ہے۔

عبد الرحمٰن نے مزید کہا کہ صارفین کے اس مسئلے سے نمٹنے اور بروقت ڈلیوری کو یقینی بنانے کے لیے مزید ٹیمیں تشکیل دی جا رہی ہیں۔

سعودی عرب مانیٹری ایجنسی (ساما) کے قواعد کے مطابق خریدار کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ سامان کی بروقت فراہمی نہ ہونے کے سبب اپنی رقم واپس لے سکتا ہے، اگر اس نے آن لائن ادائیگی کی ہے تو 14 دن کے اندر پیسے اس کے اکاؤنٹ میں واپس آجائیں گے۔

قومی تجارتی پروگرام بھی اس امر کو یقینی بنا رہا ہے کہ 10 مئی 2020 تک تمام منی مارٹ میں آن لائن ادائیگیوں کے ذریعے اشیا دستیاب ہوں۔

وزارت داخلہ کی جانب سے کیٹرنگ سروس، ریستوانوں اور فوڈ ڈیلیوری گاڑیوں کو آن لائن خدمات پیش کرنے کے لیے کرفیو اوقات میں نرمی کر کے گاہکوں کی ضروریات پوری کرنے کے لیے سحری کے 3 بجے تک کا وقت دیا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں