The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب: پلاسٹک بیگز کے استعمال سے متعلق اہم ہدایات جاری

ریاض: سعودی عرب میں دکانداروں کو پلاسٹک بیگز کا استعمال ختم کر کے ماحول دوست بیگز استعمال کرنے کا پابند بنا دیا گیا ہے۔

سعودی ویب سائٹ کے مطابق سعودی مجلس شوریٰ نے دکانداروں کو ماحول دوست بیگز استعمال کرنے کا پابند بنا دیا ہے، وزارت بلدیات و دیہی امور سے کہا گیا ہے کہ وہ متعلقہ اداروں سے رابطہ کر کے اس فیصلے پر عمل درآمد کروائے۔

اجلاس میں ماحول دوست شاپنگ بیگز استعمال کرنے کی سفارش شوریٰ کی خواتین ارکان نے پیش کی تھی، شوریٰ نے یہ سفارش 88 ووٹوں کی اکثریت سے منظور کرلی۔

رکن شوریٰ معینا نے ماحول دوست بیگز کے استعمال کی پابندی کے حق میں کہا کہ وزارت بلدیات و دیہی امور نے اس سے قبل یہ پابندی لگائی تھی کہ گرم مشروبات اور گرم کھانوں کے لیے پلاسٹک استعمال نہ کیا جائے۔ کھانے پینے کی اشیا عام تھیلیوں میں فراہم کرنے کی ممانعت کردی گئی تھی۔

وزارت نے اس مسئلے کے دیگر پہلوؤں کو پابندی میں شامل نہیں کیا تھا جس سے مشکلات پیش آرہی ہیں۔

مثال کے طور پر دکانداروں کے یہاں پلاسٹک کی تھیلیوں کا بڑا ذخیرہ جمع تھا، اسے ختم نہیں کروایا گیا۔ دکاندار مختلف اشیا عام پلاسٹک بیگز میں صارفین کو فراہم کردیتے ہیں اور یہ سڑکوں پر پڑے نظر آتے ہیں۔

ارکان کا کہنا تھا کہ سمندر اور صحرا میں یہ پلاسٹک بیگز پرندوں، مچھلیوں اور جانوروں کی غذا بن رہے ہیں۔ بالآخر انسان ان بیگز کو کسی اور شکل میں غذا کے طور پر استعمال کرلیتے ہیں۔

اجلاس میں کہا گیا کہ ایک تحقیق کے مطابق انسانی جسم میں 50 سے 500 مائیکرو میٹر تک پلاسٹک کے عناصر پائے جاتے ہیں، اس کا نوٹس لینا ہوگا۔ مجلس شوریٰ کی ذمہ داری ہے کہ وہ اس قسم کی صورتحال سے نمٹنے کے لیے نگرانی کرے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں