The news is by your side.

ایٹمی توانائی کے پرامن استعمال کے حامی ہیں: سعودی عرب

ریاض: سعودی کابینہ نے عراق میں امن و استحکام کو یقینی بنانے والے ہر اقدام کی تائید و حمایت کا اعادہ کیا ہے، سعودی کابینہ کا کہنا ہے کہ ایٹمی توانائی کے پرامن استعمال کی پالیسی پر گامزن ہیں۔

سعودی ویب سائٹ کے مطابق شاہ سلمان بن عبد العزیز کی زیر صدارت سعودی کابینہ کا اجلاس منگل کو قصر السلام جدہ میں منعقد ہوا، ایس پی اے کے مطابق اجلاس کے آغاز میں شاہ سلمان نے کابینہ کے ارکان کو چینی صدر کے مکتوب سے آگاہ کیا۔

انہوں نے بتایا کہ مکتوب کا تعلق چین اور سعودی عرب کے دوست عوام اور ممالک کے باہمی تعلقات اور مختلف شعبوں میں انہیں مضبوط بنانے سے ہے۔

کابینہ کو گزشتہ دنوں متعدد ممالک کے عہدیداروں کے ساتھ سعودی رہنماؤں کی ملاقاتوں اور مذاکرات سے آگاہ کیا گیا۔

کابینہ کو انڈونیشیی شہر بالی میں منعقدہ جی 20 کے وزارتی اجلاسوں میں سعودی عرب کی شرکت کا جائزہ لیتے ہوئے بتایا گیا کہ مملکت نے ڈیجیٹل اکانومی کی شرح نمو میں تیزی لانے اور اسٹریٹجک منصوبوں اور اقدامات کے ذریعے ڈیجیٹل خلا پر کرنے کے حوالے سے کوششوں کو اجاگر کیا۔

وزیر مملکت و رکن کابینہ برائے امور شوریٰ و قائم مقام وزیر اطلاعات ڈاکٹرعصام بن سعید نے اجلاس کے بعد ایس پی اے کو بتایا کہ کابینہ نے خطے اور دنیا بھر میں تازہ واقعات اور نئی صورتحال کا جائزہ لیا۔

سعودی عرب کی طرف سے یہ یقین دہانی کروائی گئی کہ وہ عراق میں امن و استحکام، عراقی عوام اور اس کی کامیابیوں کے تحفظ کو یقینی بنانے والے ہر اقدام کے ساتھ ہے۔

ڈاکٹر عصام بن سعید کا کہنا تھا کہ کابینہ نے ایٹمی توانائی کی عالمی ایجنسی کے اقدامات کی حمایت پر مبنی اپنی پالیسی کو اس بات کی علامت قرار دیا کہ سعودی عرب ایٹمی توانائی کے پرامن استعمال کی غیر متزلزل پالیسی پر گامزن ہے اور چاہتا ہے کہ ایٹمی توانائی کی عالمی ایجنسی اس حوالے سے جو اقدام کرتی ہے وہ اسی جہت میں ہوتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں