The news is by your side.

Advertisement

ایک نایاب مرض جو دنیا میں‌ صرف 33 افراد کو لاحق ہے

کچھ حادثے واقعی زندگی بدل کر رکھ دیتے ہیں!

دنیا میں ہر شخص مختلف مسائل اور مشکلات کا سامنا کرتا ہے۔ زندگی کے نشیب و فراز، مختلف حالات و واقعات اس کی ذہنی اور جسمانی کارکردگی پر بھی اثر ڈالتے ہیں۔ انسان کے مزاج اور رویے میں تبدیلیاں، کسی عادت کا ترک کر دینا یا کوئی نئی عادت اپنا لینا بھی اس کے عام مشاہدات، تجربوں اور بعض اوقات کسی حادثے کا نتیجہ بھی ہوسکتا ہے۔

2015 میں نارتھ کیرولینا میں ایک کار حادثے میں 38 سالہ اسکاٹ میل شدید زخمی ہوگیا۔ وہ ایک کار شوروم میں ملازمت کرتا تھا۔ حادثے میں سَر پر لگنے والی ضرب کے نتیجے میں‌ اس کے دماغ کو شدید نقصان پہنچا تھا۔ اسے سرجری سے گزرنا پڑا۔ طویل عرصہ زیرِ علاج رہنے کے بعد جب اسکاٹ میل چلنے پھرنے کے قابل ہوا تو زندگی سے مایوسی اور بیزاری محسوس ہوئی۔ طبی ماہرین کے مطابق وہ شدید ڈپریشن کا شکار تھا، مگر ایک روز اس نے عجیب فیصلہ کیا۔ اسکاٹ میل اپنے بچوں کے ساتھ بازار گیا اور مختلف رنگ اور مصوری کے لیے برش خرید کر گھر لوٹا۔ اسکاٹ میل نے تصویریں بنانا شروع کر دیں۔

اسکاٹ میل کا کہنا ہے کہ اس سے قبل کبھی اسے مصوری میں کشش محسوس نہیں ہوئی اور اس نے کبھی رنگوں اور برش کو ہاتھ نہیں لگایا تھا، مگر اس حادثے نے اس کی زندگی بدل کر رکھ دی ہے۔ حیران کُن اور تعجب خیز بات یہ ہے کہ وہ بہت عمدہ منظر کشی کر رہا ہے۔

اسکاٹ میل کی زندگی اور درد ناک حادثے کے بارے میں تو آپ جان چکے ہیں۔ اب ان ڈاکٹروں اور نفسیاتی امراض کے ماہرین کی طرف چلتے ہیں جنھوں نے بتایا ہے کہ آخر اسکاٹ میل کے ساتھ ہوا کیا ہے۔

ماہرین کے مطابق اسکاٹ میل سیونٹ سنڈروم کا شکار ہے۔ کسی حادثے کے نتیجے میں دماغ پر لگنے والی چوٹ کا علاج کروانے اور رفتہ رفتہ زندگی کی طرف لوٹنے والے مریض ایسی کیفیت اور حالت کا اظہار کرسکتے ہیں جیسا کہ اسکاٹ کر رہا ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق یہ ایک نایاب بیماری ہے، یا اسے عجیب و غریب پیچیدگی کہا جاسکتا ہے جس کے شکار افراد کی تعداد دنیا بھر میں صرف 33 ہے۔

طبی ماہرین کے مطابق سیونٹ سنڈروم کے شکار افراد اچانک ہی کسی صلاحیت کا اظہار کرنے لگتے ہیں جس کا حادثے سے پہلے گمان تک نہیں ہوتا۔ وہ کچھ نیا سیکھنے یا کرنے کی طرف مائل ہو جاتے ہیں۔ یہ کوئی نئی زبان ہو سکتی ہے، یا کوئی ہنر بھی اور اکثر مصوری یا کوئی دوسرا تخلیقی کام شروع کر دیتے ہیں۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں