The news is by your side.

Advertisement

زینت کو زندہ جلانے جیسے واقعات پر پہلا مذمتی بیان پارلیمنٹ سے جانا چاہیے،رضاربانی

اسلام آباد: لڑکیوں کو زندہ جلائے جانے کے واقعات پر سینیٹ کی کارروائی 5 منٹ کیلئے معطل کرتے ہوئے چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے کہا کہ ایسے واقعات پر مذمت کا پہلا پیغام پارلیمینٹ سے جانا چاہئے۔

چیئرمین رضا ربانی کی زیر صدارت سینیٹ اجلاس ہوا جس میں لاہور میں پسند کی شادی کرنے پر زندہ جلائی گئی زینت سے متعلق واقعے کی مذمت کی گئی اور اس ہولناک واقعے کو تحقیقات کے لیے سینیٹ کی انسانی حقوق کی کمیٹی کے حوالے کردیاگیا۔

چیئرمین سینیٹ نے اس واقعے کے خلاف مذمت کرتے ہوئے ایوان کی کارروائی 5 منٹ کیلئے معطل کرتے ہوئے کہا کہ اس کا مقصد معاشرے میں شعور اجاگر کرنا ہے،ایسے واقعات کی مذمت کا پہلا پیغام پارلیمینٹ کی جانب سے جانا چاہئے کیوں کہ معاشرے میں حساسیت پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔

چیئرمین سینیٹ رضا ربانی کا کہنا تھا کہ گزشتہ دنوں میں بچیوں کو زندہ جلائے جانے کے واقعات کا رجحان ہوا ہے جو انتہائی خوفناک اور اسلام کی تعلیمات کے خلاف ہے،شاید ہی ایسا کوئی دن گزرتا ہو جب معصوم بچیون پر سفاکانہ مظالم کا سننے میں نہ آتا ہو۔

بحث میں حصہ لیتے ہوئے سینیٹر صلاح الدین ترمزی کا کہنا تھا کہ ایسے واقعات کھلی دہشت گردی ہیں،اور ایسے واقعات کا مقدمہ انسداد دہشت گردی میں چلایا جانا چاہیے،انہوں نے مزید کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ ہم دور جاہلیت میں چلے گئے ہیں۔

پیپلز پارٹی کے تعلق رکھنے والے سینیٹر فرحت اللہ بابر نے واقعے کا ازخود نوٹس لینے پر چیئرمین سینیٹ رضا ربانی کو خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ حالیہ دنوں میں ایسے واقعات میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے جس کا براہ راست تعلق اسلامی نظریاتی کونسل کی تجاویز کیساتھ ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں