The news is by your side.

Advertisement

دل والے ’ایموجی‘ بھیجنا آن لائن ہراسانی، سزا اور جرمانہ

ریاض: سعودی عرب میں اب واٹس ایپ پر دل بھیجنے والے شخص کو جرمانے کے ساتھ سزا کا بھی سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔

عرب میڈیا کی رپورٹ کے مطابق سعودی اینٹٰ فراڈ ایسوسی ایشن کے رکن نے بتایا کہ سعودی قوانین کے تحت اگر اس ایموجی کو بھیجنے والا شخص قصور وار پایا گیا تو اس صورت میں ایک لاکھ ریال (46 لاکھ پاکستانی روپے) اور 2 سے پانچ سال تک سزا بھگتنی پڑے گی۔

سعودی اینٹی فراڈ ایسوسی ایشن کے رکن نے بتایا کہ واٹس ایپ پر دل والا ایموجی بھیجنا ہراسانی کے جرائم میں شمار کیا جاتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق اگر موصول ہونے والے صاررف کی جانب سے ایموجی بھیجنے والے صارف کے خلاف کارروائی کا کہا جائے تو آن لائن چیٹس کے دوران ایموجی اور تصاویر کا استعمال آن لائن ہراسانی کے جرم میں تبدیل ہوسکتا ہے۔

واٹس ایپ استعمال کرنے والوں کو تنبیہ کرتے ہوئے کہا کہ کوئی بھی شخص کسی بھی صارف کی اجازت یا رضامندی کے بغیر کسی کے ساتھ نامناسب گفتگو سے گریز کرے کیوں کہ جرم ثابت ہونے پر ملزم کو ایک لاکھ ریال کے جرمانے سمیت ایک سال سے دو سال تک کی سزا ہوسکتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ جرم دوبارہ کیے جانے کی صورت جرمانہ 3 لاکھ ریال اور سزا 5 سال تک بڑھ سکتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں