The news is by your side.

پولیس اپنے ہی ساتھی کے قتل کا الزام ثابت کرنے میں ناکام، سانحہ صفورہ کا مرکزی مجرم ایک اور مقدمے میں بری

کراچی : سندھ ہائی کورٹ نے سانحہ صفورہ کا مرکزی مجرم سعد عزیز کو دہشت گردی کے ایک اور مقدمے میں بری کردیا۔

سندھ ہائیکورٹ میں پولیس اہکار کے قتل کیس کی سماعت ہوئی، پولیس اپنے ہی ساتھی کے قتل کا الزام ثابت کرنے میں ناکام رہی۔

پراسیکیوشن نے عدالت کو بتایا کہ ملزم نے اپنے دیگر ساتھیوں کے ہمراہ 2014 میں نیو کراچی کے علاقے میں پولیس پر حملہ کیا تھا۔

پراسیکیوشن کا کہنا تھا کہ پولیس نے الزام عائد کیا کہ حملے میں محافظ فورس کا اہلکار وقار ہاشمی موقع پر ہی دم توڑ گیا تھا، جس کے بعد ماتحت عدالت نے ملزم سعد عزیز کو عمر قید اور جرمانوں کی سزا سنائی تھی۔

وکیل صفائی نے عدالت میں کہا کہ ملزم کے خلاف کوئی براہ راست شہادت نہیں، پولیس کی تحویل میں ملزم سے تشدد کے زریعے اعتراف کرایا گیا۔

وکیل کا مزید کہنا تھا کہ سعد عزیز پر سانحہ صفورا میں آغا خانی برادری کے 50سے زائد افراد کے قتل،امریکی شہری کے قتل سمیت متعدد مقدمات درج کیے گئے۔

وکیل صفائی نے کہا کہ تاہم الزامات ثابت نہ ہونے پر ہائی کورٹ کے اپیلیٹ بینچ نے ملزم کو ان الزامات سے بری کردیا جبکہ ملزم کے خلاف متعدد مقدمات اب بھی زیر التواء ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں