آشیانہ ہاؤسنگ اسکینڈل : شہبازشریف کا 10 روز کا جسمانی ریمانڈ منظور -
The news is by your side.

Advertisement

آشیانہ ہاؤسنگ اسکینڈل : شہبازشریف کا 10 روز کا جسمانی ریمانڈ منظور

لاہور: آشیانہ ہاؤسنگ اسکینڈل میں گرفتار سابق وزیراعلیٰ پنجاب اور مسلم لیگ ن کے صدرشہبازشریف کو احتساب عدالت نے 10 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے کردیا۔

تفصیلات کے مطابق نیب نے سابق وزیراعلیٰ پنجاب کے 15 روزہ جسمانی ریمانڈ کی درخواست کی جس پر عدالت نے شہبازشریف کا 10 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرلیا۔

آشیانہ ہاؤسنگ کیس میں گرفتار مسلم لیگ ن کے صدرشہبازشریف کو آج احتساب عدالت میں پیش کیا گیا۔

نیب کی جانب سے سابق وزیراعلیٰ پنجاب کو انتہائی سخت سیکیورٹی میں بکتربند گاڑی میں احتساب عدالت پہنچایا گیا۔

سماعت کے آغاز پرکمرہ عدالت میں رش زیادہ ہونے پر احتساب عدالت کے جج نجم الحسن نے شہبازشریف اور وکلا کو اپنے چیمبرمیں بلالیا اورسماعت شروع کی۔

سابق وزیراعلیٰ پنجاب نے کہا میں کیس کی سماعت کھلی عدالت میں چاہتا ہوں جس پر معزز جج کورٹ روم میں آگئے جہاں سماعت ہوئی۔

شہبازشریف کی جانب سے ان کے وکیل امجد پرویز احتساب عدالت میں پیش ہوئے۔

مسلم لیگ ن کے صدر شہبازشریف نے احتساب عدالت میں کہا کہ کوئی غیرقانونی کام نہیں کیا، ملک وقوم کی ترقی کے لیے کام کیا۔

سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے کہا کہ لوٹنے والوں سے وصولی کرکے قومی خزانے کونقصان سے بچایا۔

امجد پرویز نے کہا کہ چوہدری لطیف اینٹی کرپشن کے ایک کیس میں مفرور ہے، ایک کیس میں90 کروڑروپے چوہدری لطیف سے وصول کیے گئے۔

سابق وزیراعلیٰ پنجاب نے کہا کہ ملزمان کورنگے ہاتھوں پکڑا لیکن نیب نے ان کوچھوڑدیا، آپ جانتے ہیں لٹیرے کیسے آپس میں مل جاتے ہیں۔

نیب پراسیکیوٹر نے احتساب عدالت میں الزامات سے متعلق دلائل دیتے ہوئے کہا کہ شہبازشریف نے اختیارات سے تجاوزکیا۔

انہوں نے کہا کہ شہبازشریف کےغیرقانونی اقدامات سے خزانے کو نقصان پہنچا، انہوں نے آشیانہ اسکیم کا کنٹریکٹ غیرقانونی طریقے سے دیا۔

نیب پراسیکیوٹر نے عدالت سے استدعا کی کہ شہبازشریف سے مزید تفتیش کرنی ہے، ریمانڈ دیا جائے۔

سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف کے وکیل امجد پرویز نے جسمانی ریمانڈ کی مخالفت کی۔

احتساب عدالت نے شہبازشریف کا 10 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرتے ہوئے کیس کی سماعت 16 اکتوبر تک ملتوی کردی۔

شہبازشریف کو سماعت کے بعد انتہائی سخت سیکیورٹی میں بکتربند گاڑی میں احتساب عدالت سے روانہ کردیا گیا۔

خیال رہے کہ آج احتساب عدالت لے جانے سے پہلے شہبازشریف کا طبی معائنہ کیا گیا اور ڈاکٹرز نے انہیں مکمل فٹ قرار دیا۔

سابق وزیراعلیٰ کی پیشی کے موقع پرسیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کیے گئے، عدالت کے گرد پولیس کی بھاری نفری تعینات تھی۔

شہبازشریف کے صاحبزادے حمزہ شہباز بھی احتساب عدالت پہنچے اور انہیں عدالت کے اندرجانے کے اجازت دی گئی۔

مسلم لیگ ن کی رہنما مریم اورنگزیب، خواجہ احمد حسان، سمیع اللہ خان، سائرہ افضل تارڑ سمیت دیگر بھی احتساب عدالت کے باہرموجود تھے۔

احتساب عدالت کے باہر مسلم لیگ ن کے کارکن بھی بڑی تعداد میں جمع تھے جن کی جانب سے مسلسل نعرے بازی کی گئی۔

کرپشن کیس: نیب نے شہبازشریف کو گرفتار کرلیا

یاد رہے کہ گزشتہ روز قومی احتساب بیورو( نیب) نے آشیانہ کمپنی کیس میں مسلم لیگ ن کے صدر اور اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف کو کرپشن کے الزامات میں گرفتار کیا تھا۔

نیب کے ترجمان کا کہنا تھا کہ شہباز شریف کی گرفتاری آشیانہ ہاؤس اسکینڈل میں غیرقانونی ٹھیکے دینے پرگرفتارکیا گیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں