The news is by your side.

Advertisement

یادداشت کو بہتر بنانے کے لیے شرلاک ہومز کا طریقہ

چیزوں کو یاد رکھنا آج کل ہر شخص کے لیے مسئلہ بن چکا ہے اور لوگ اپنی خراب یادداشت سے پریشان ہیں، یادداشت کو بہتر بنانے کے بہت سے طریقے ہیں اور ایسا ہی ایک طریقہ شرلاک ہومز کا بھی ہے۔

اگر آپ نے معروف فکشن کردار سراغرساں شرلاک ہومز کی کہانیاں اور فلمیں پڑھ اور دیکھ رکھی ہیں تو آپ کو علم ہوگا کہ وہ ہر قسم کی تفصیلات ایک مائنڈ (دماغ) پیلس میں محفوظ کرتا ہے۔

یہ ایک ایسی تیکنیک ہے جو قدیم یونان میں سامنے آئی تھی اور اب محققین نے دریافت کیا ہے کہ یہ طریقہ کار واقعی طویل المعیاد یادوں کو تشکیل دینے میں کارآمد ثابت ہوتا ہے۔

میتھڈ آف لوسائی نامی اس تکنیک میں کوئی شخص ذہنی طور پر کسی جانے پہچانے مقام پر گھومتے پھرتا ہے۔

جیسے گھر یا کوئی پسندیدہ پارک، ذہنی طور پر گھومتے ہوئے جو چیزیں یاد رکھنا چاہتے ہیں وہ وہاں مختلف حصوں میں رکھ دی جاتی ہیں اور بعد ازاں حقیقت میں اپنے قدموں پر دوبارہ چلتے ہوئے ان تفصیلات کو اٹھا لیا جاتا ہے۔

مثال کے طور پر اگر آپ مینار پاکستان سے واقف ہیں تو تصور کریں کہ وہاں آپ چہل قدمی کر رہے ہیں اور کسی لفظ جیسے کتاب کو جھیل میں گرا دیا، پھر ایک اور لفظ کسی اور جگہ گرا دیا۔

اب جب آپ حقیقت میں مینار پاکستان جائیں گے تو اسی نقشے کو ذہن میں اجاگر کرتے ہوئے ان مقامات پر چلتے ہوئے ان چیزوں کو اٹھا لیں۔

ایک تحقیق کے مطابق کہ اس طریقہ کار سے لوگ الفاظ کی فہرستیں، ہندسوں کی سیریز اور دیگر اشیا کو طویل عرصے یاد رکھ سکتے ہیں۔

ویانا یونیورسٹی کی اس تحقیق میں 17 میموری ایتھلیٹس یا چیمپیئنز کی خدمات حاصل کی گئیں جو یادداشت کے مقابلوں میں دنیا کے سرفہرست 50 افراد میں شامل تھے۔

اسی طرح 16 ایسے افراد کو بھی تحقیق کا حصہ بنایا گیا جو عمر اور ذہانت کے حوالے سے ان میموری ایتھلیٹس کا مقابلہ کرسکتے تھے۔

ان رضا کاروں کے دماغوں کے ایف ایم آر آئی اسکینز اس وقت کیے گئے جب وہ ایک فہرست سے مختلف الفاظ پڑھ رہے تھے۔ اس کے بعد ان رضا کاروں سے کہا گیا کہ وہ ان الفاظ کو اسی ترتیب سے یاد کریں جس طرح فہرست میں دی گئی تھی۔

تحقیق کے دوسرے حصے میں 50 ایسے افراد کو شامل کیا گیا جن کا یادداشت کی تربیت کا کوئی تجربہ نہیں تھا اور ان میں سے 17 کو 6 ہفتوں تک میتھڈ آف لوسائی استعمال کرنے کی تربیت فراہم کی گئی۔

ان میں سے 16 افراد کو ایک اور مختلف طریقہ کار کی تربیت فراہم کی گئی جبکہ باقی افراد کو کسی قسم کی تربیت نہیں دی گئی۔

تمام افراد کے دماغوں کو ایف ایم آر آئی اسکینز تربیت سے پہلے اور بعد میں کیے گئے اور وہی ٹاسکس کرائے گئے جو پہلے حصے میں دوسرے گروپ سے کروائے گئے تھے۔

نتائج سے معلوم ہوا کہ جن افراد کو میتھڈ آف لوسائی کی تربیت دی گئی تی انہوں نے طویل المعیاد یادوں کے حوالے سے دیگر کے مقابلے میں بہترین کارکردگی کا مظاہر کیا۔

محققین نے دریافت کیا کہ اس طریقہ کار کی تربیت سے ان افراد کی پائیدار یادوں میں نمایاں اضافہ ہوا مگر مختصر المدت یادوں میں کوئی خاص تبدیلی دیکھنے میں نہیں آئی۔

ماہرین نے دیکھا کہ میموری ایتھلیٹس اور لوسائی کی تربیت حاصل کرنے والے افراد کی الفاظ کی فہرستوں اور ترتیب کو یاد رکھنے کی دماغی سرگرمی ملتی جلتی تھی۔

انہوں نے کہا کہ اس طریقہ کار کو سیکھنا ہر ایک کے لیے ممکن ہے، بس کچھ وقت اور مشق کو معمول بنانے کی ضرورت ہوگی، چاہے ہر ایک کے لیے یہ موزوں نہ ہو مگر اس سے یادداشت بہتر ہوسکتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں