The news is by your side.

Advertisement

سندھ اسمبلی میں بجٹ کثرتِ رائے سے منظور

اپوزیشن کا ٹیکسز میں اضافے پر شدید احتجاج

کراچی:سندھ اسمبلی میں فنانس بل ایوان سےکثرت رائے سےمنظور کرلیا گیا ، ایم کیو ایم کی جانب سے پیش کردہ ترامیم مسترد کردی گئیں۔

تفصیلات کے مطابق سندھ اسمبلی میں 12کھرب 17ارب سےزائد کابجٹ کثرت رائے سے منظور کرلیا گیا، اجلاس میں اپوزیشن کے جانب سے ٹیکس میں اضافےکے خلاف شدید احتجاج کیا گیا ،ایم کیوایم کے محمد حسین کی جانب سے پیش کردہ فنانس بل میں ترامیم مسترد ہونے پر بجٹ مستردکردیا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سندھ اسمبلی میں منظور ہونے والے فنانس بل میں آن لائن ٹیکسی سروس پر 5فیصد سیلز ٹیکس نافذ کیا گیا ہے، ٹریننگ سینٹرز پر 5 فیصد سیلز ٹیکس نافذ،کولڈ اسٹوریجزپر 13 فیصد سیلز ٹیکس لگایا گیا ہے۔

اسی بجٹ میں سالڈ ویسٹ مینجمنٹ اورپاور ٹرانسمیشن سروس پر 13 فیصد سیلز ٹیکس کا نفاذ کیا گیا ہے جبکہ معدنیات کے لیے کھدائی کرنے والے اداروں پر 5 فیصد سیلز ٹیکس نافذ کیا گیا ہے۔

ان ڈور گیمز مراکز پر 10 فیصد سیلز ٹیکس نافذ ہوگا اور انشورنس ایجنٹس پر 5 فیصد سیلز ٹیکس کا نفاذ کیا گیا ہے۔ گاڑیوں کی پارکنگ فیس اور مشینری و آلات کی سروس پر 5 فیصد ٹیکس لگا دیا گیا ہے ۔ٹریول ایجنٹس اورٹور آپریٹرز پرسیلز ٹیکس میں کمی کرتے ہوئے اسے 10 فیصد سے 5 فیصد کردیا گیا ہے۔شراب، میتھانول، اسپرٹ لائسنس اور ڈیوٹیز میں اضافہ کیا گیا ہے۔

گاڑیو ں پر ٹیکس میں اضافہ

سندھ حکومت نے گاڑیوں پر ٹیکس میں اضافہ کرتے ہوئے 1000 سی سی نان کمرشل گاڑیوں سےرجسٹریشن پر20 ہزار لینے کا فیصلہ کیا ہے۔149 سی سی تک موٹر سائیکل رجسٹریشن پرون ٹائم 18 سو روپے ٹیکس لیاجائےگا جبکہ 150 سی سی اور زائد کی موٹرسائیکلوں پررجسٹریشن کےلیےون ٹائم 3 ہزار لیےجائیں گے۔

تین ہزار سے زائد سی سی کی لگژری گاڑیوں پر لگژری ٹیکس بڑھا کر ڈیڑھ لاکھ روپے کردیا گیا ہے جبکہ 2ہزارسی سی سے 2900 سی سی کی گاڑیوں پر ٹیکس 50 سےبڑھاکر 75 ہزار کردیا گیا ہے۔

کمرشل ٹرک،رکشہ، بس، وین، ڈمپراور کرین پر رجسٹریشن فیس ایک سےبڑھا کر سوافیصدکردی گئی۔1000 سی سی گاڑیوں کی رجسٹریشن فیس ایک سے بڑھا کر 1.25 فیصد کردی گئی۔1300 سی سی گاڑیوں کی رجسٹریشن فیس 2 فیصد سےبڑھاکر2.5 فیصد کردی گئی ہے اور 2500 سی سی سے زائد گاڑیوں کی رجسٹریشن فیس 4 سے بڑھاکر 5 فیصد کردی گئی ہے

دیگر ٹیکسز

پروفیشنل انکم ٹیکس 150 روپے بڑھا کر 5 سو روپے کردیا گیا۔انفرا اسٹرکچر سیس کی شرح 1.15 سے بڑھا کر 1.2 فیصد کردی گئی ہے۔

پیٹرول پمپس اور سی این جی اسٹیشنز پر پرفیشنل ٹیکس ڈھائی سےبڑھاکر 3ہزارکردیا گیا۔فیکٹریوں، وڈیو شاپس، رئیل اسٹیٹ ڈیلرز، کارڈیلرز پر ٹیکس 500 سے بڑھاکر 1000 روپےکردیاگیا ہے جبکہ پراپرٹی ٹیکس اور مکانوں کے کرائے پر ٹیکسوں میں بھی ردوبدل کیا گیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں