محکمہ تعلیم میں 200 اسامیوں پر 460 بھرتیاں ہوئیں: سندھ حکومت کا اعتراف -
The news is by your side.

Advertisement

محکمہ تعلیم میں 200 اسامیوں پر 460 بھرتیاں ہوئیں: سندھ حکومت کا اعتراف

کراچی: محکمہ تعلیم سندھ میں غیر قانونی بھرتیوں کے معاملے پر صوبائی حکومت نے اعتراف کیا کہ 200 اسامیوں پر 460 بھرتیاں ہوئیں۔ عدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے محکمہ تعلیم کو جامع رپورٹ جمع کروانے کا حکم دیا۔

محکمہ تعلیم سندھ میں غیر قانونی بھرتیوں کے معاملے پر 5 سال سے تنخواہوں سے محروم چپراسیوں نے سپریم کورٹ سے رجوع کرلیا۔ درخواست گزاروں کا مؤقف تھا کہ انہیں صرف دو سال تنخواہیں دیں گئیں اور پھر بند کر دی گئیں۔

جسٹس سجاد علی شاہ نے حکومت سندھ کے وکیل ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سے استفسار کیا کہ جس نے بھرتی کی اس کے خلاف کیا کارروائی کی گئی؟ 2 سال تنخواہیں دینے کے بعد کیسے کہہ رہے ہیں کہ یہ ملازم نہیں۔ اگر فارغ بھی کرنا ہے تو قانون کے مطابق کریں۔

جسٹس سجاد علی شاہ نے کہ مسائل کیوں بڑھاتے ہیں؟ گناہ اتنی آسانی سے نہیں دھلتے، اپنے ہی گلے پڑتے ہیں۔

عدالت نے محکمہ تعلیم کو اگلی سماعت پر جامع رپورٹ جمع کروانے کا حکم دے دیا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں