site
stats
پاکستان

کراچی: ٹریکر کے بغیر چلنے والی موٹرسائیکلیں ضبط کرنے کا فیصلہ

کراچی: وزیرداخلہ سندھ سہیل انور سیال نے ہدایت کی ہے کہ شہر قائد میں چلنے والی تمام موٹر سائیکلوں میں ٹریکر سسٹم جلد از جلد نصب کردیے جائیں تاکہ جرائم کی روک تھام میں مدد مل سکے، مقررہ وقت تک جن موٹرسائیکلوں میں ٹریکر نصب نہ کیا جائے انہیں ضبط کرلیا جائے۔

تفصیلات کے مطابق وزیر داخلہ سندھ کی زیر صدارت موٹر سائیکل مینوفیکچررز ایسوسی ایشن،ٹریکنگ کمپنیز،سندھ پولیس،ایکسائز ڈپارٹمنٹ،رینجرز اور سی پی ایل سی پرمشتمل اعلیٰ سطح کا مشترکہ اجلاس منعقد کیا گیا۔

وزیر داخلہ سندھ کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ صوبے بھر کی موٹر سائیکلوں میں ٹریکنگ ڈیوائسز کی تنصیب کے حوالے سے گزشتہ میٹنگ میں یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ نئی اور پرانی موٹر سائیکلوں میں ٹریکنگ ڈیوائسز کی تنصیب کا عمل تمام اسٹیک ہولڈرز کی باہمی مشاورت سے مکمل کیا جائےگا۔

اجلاس کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے سہیل انور سیال کا کہنا تھا کہ جرائم سے وابستہ عناصر، گروہوں اور کارندوں کی بیخ کنی حکومت سندھ کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔

انہوں نے کہا اب تک ہونے والے زیادہ تر جرائم میں موٹر سائیکل سوار ملوث پائے گئے ہیں، اُسی تناظر میں موٹر سائیکلوں میں ٹریکر ڈیوائسز کی تنصیب انتہائی ضروری اور ناگزیر ہے۔

مزید پڑھیں: سپریم کورٹ نے سندھ میں موٹرسائیکل رکشہ چلانے کی اجازت دیدی

وزیر داخلہ سندھ کا کہنا تھا کہ بغیرٹریکرنئی موٹرسائیکل سڑک پرلانےکی اجازت نہیں ہوگی اور پہلےمرحلےمیں نئی موٹرسائیکلوں میں ٹریکرنصب کرانالازم ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ پرانی موٹرسائیکلوں میں ٹریکرنصب کرنےکاوقت دیاجائےگا جبکہ 4 سے 6 ماہ پرانی موٹر سائیکل میں ٹریکر نصب کرانا لازم ہوگا، اس ضمن میں 8 کمپنیوں کو ذمہ داریاں سونپی جائیں گی۔

اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے موٹر سائیکل ایسوسی ایشن اور ٹریکنگ کمپنیوں کے نمائندگان نے وزیر داخلہ سندھ کو یقین دہانی کروائی کہ ان کا تمام تر غیر مشروط تعاون سندھ حکومت کے ساتھ ہے اور عوام کو جرائم سے محفوظ معاشرے کی فراہمی کے حوالے سے وہ سرکاری اقدامات کی مکمل حمایت و تائید کریں گے۔

یہ بھی پڑھیں: کراچی: ٹریفک پولیس کا شہریوں‌ سے مک مکا جاری

سہیل انور خان سیال کے استفسار پر شرکاء نے بتایا کہ شہر میں چلنے والے بیشتر چنگ چی رکشوں کا کوئی باقاعدہ ریکارڈ موجود نہیں ہے، وزیر داخلہ سندھ نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اس حوالے سے چنگ چی رکشوں کو باقاعدہ ضابطہ کار میں لانے کے احکامات جاری کئے۔

وزیر داخلہ سندھ نے  سیکرٹری داخلہ سندھ کو ہدایت کی کہ تمام متعلقہ اداروں اور اسٹیک ہولڈرز کی باہمی مشاورت سے قانونی تقاضوں کو پورا کرنے کے لئے ابتدائی مسودہ تیار کیا جائے اور موٹر سائیکلوں میں ٹریکنگ ڈیوائسز کی تنصیب کے عمل میں مزید تاخیر سے کام نہ لیا جائے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top