The news is by your side.

Advertisement

پنجاب میں زہریلی اسموگ: سیکریٹری ماحولیات کی عدالت میں طلبی

لاہور: صوبہ پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں پھیلتی زہریلی اسموگ پر قابو پانے کے لیے اقدامات نہ کرنے کے خلاف لاہور ہائیکورٹ میں درخواست دائر کردی گئی۔ عدالت نے حفاظتی اقدامات سے متعلق تحریری رپورٹ طلب کرلی جبکہ سیکریٹری ماحولیات بھی عدالت میں پیش ہوئے۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں اسموگ پر قابو پانے کے لیے اقدامات نہ کرنے کے خلاف درخواست پر چیف جسٹس سید منصور علی شاہ نے کیس کی سماعت کی۔

درخواست گزار کے وکیل نے عدالت کو آگاہ کیا کہ گذشتہ برس نومبر میں اسموگ کے نتیجے میں شہری مختلف امراض میں مبتلا ہوگئے مگر حکومت نے شہریوں کی رہنمائی کے لیے اور اسموگ کے خاتمے کے لیے عملی اقدامات نہیں کیے۔

مزید پڑھیں: زہریلی اسموگ سے بچیں

سماعت میں سیکریٹری ماحولیات عدالت میں پیش ہوئے اور عدالت کو آگاہ کیا کہ بھارت میں فصل خریف کی کٹائی کے بعد پھوک کو آگ لگا دی گئی جس سے اسموگ پیدا ہوا۔

انہوں نے بتایا کہ موسم کی تبدیلی کے نتیجے میں زمین ٹھنڈی ہونے اور ہوا میں نمی کی کمی سے ذرات کی تعداد میں اضافے سے اسموگ پیدا ہوتا ہے۔

سیکریٹری ماحولیات نے اسموگ سے نمٹنے کے لیے منظور کردہ پالیسی عدالت میں پیش کی اور کہا کہ اسموگ میں کمی کے لیے دھواں چھوڑنے والی گاڑیوں کے خلاف کارروائی کی جا رہی ہے۔

عدالت نے سوال کیا کہ بتایا جائے ایک سال میں اسموگ پر قابو پانے کے لیے اقدامات کیوں نہیں کیے گئے۔ عدالت نے قرار دیا کہ اسموگ کے متعلق حکومتی اقدامات میں سنجیدگی نظر نہیں آتی۔

لاہور ہائیکورٹ نے سماعت ملتوی کرتے ہوئے اسموگ کے خاتمے اور اس سے نمٹنے کے لیے کیے جانے والے حفاظتی اقدامات سے متعلق تحریری رپورٹ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں