The news is by your side.

Advertisement

’فرق اتنا نہیں تھا، معیاری سہولیات ملتیں تو میڈل جیت سکتا تھا‘

ٹوکیو اولمپکس میں پانچویں پوزیشن حاصل کرکے قوم کا سر فخر سے بلند کرنے والے ویٹ لفٹر طلحہ طالب کا کہنا ہے کہ مستقبل میں زیادہ محنت کرکے میڈل جیتوں گا۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق ٹوکیو اولمپکس میں طلحہ طالب دو کلو گرام کی فرق سے میڈل نہ جیت سکے لیکن ان کا کہنا ہے کہ اگر بین الاقوامی معیار کی سہولیات فراہم کی جاتیں تو دو کلو کا فرق اتنا بڑا نہیں تھا۔

انہوں نے کہا کہ اگر جیت جاتا تو آج پورا ملک میڈل جیتنے کا جشن منار ہا ہوتا، مستقبل میں اور زیادہ محنت کرکے میڈل جیتوں گا۔

اُن کا مزید کہنا تھا کہ لوگوں کی دعاؤں کے بغیر میرے لیے یہ سفر ممکن نہ تھا جن لوگوں نے سپورٹ کیا ان کا شکر گزار ہوں۔

یہ پڑھیں: ٹوکیو اولمپکس 2020 : پاکستانی کھلاڑی تاریخ رقم کر کے سجدہ ریز

واضح رہے 21 سالہ طلحہ طالب کا تعلق گوجرانوالہ سے ہے، طلحہ طالب نے کامن ویلتھ چیمپئن شپ اور انٹرنیشنل سالیڈیریٹی چیمپئن شپ میں پاکستان کے لیے گولڈ میڈلز جیتے جب کہ آسٹریلیا میں ہونے والے کامن ویلتھ گیمز میں بھی شاندار کارکردگی دکھائی تھی۔

علاوہ ازیں اس سال ہونے والی ایشین ویٹ لفٹنگ چیمپئن شپ میں انہوں نے کانسی کا تمغہ جیتا تھا جس کے بعد انہیں ٹوکیو اولمپکس میں وائلڈ کارڈ پر شرکت کیلئے منتخب کیا گیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں