The news is by your side.

Advertisement

کراچی: ٹیچرز ایسوسی ایشن کا 8 گھنٹے سے جاری احتجاج ختم، کل بھوک ہڑتال کا اعلان

کراچی: شہرِ قائد میں پریس کلب پر 8 گھنٹے سے جاری ٹیچرز ایسوسی ایشن کا احتجاج ختم کر دیا گیا، تنظیم کے صدر اشرف خاصخیلی کا کہنا ہے کہ اساتذہ پُر امن احتجاج کرنا چاہتے تھے لیکن ریاست نے تشدد کیا۔

تفصیلات کے مطابق سندھ کے سرکاری اسکولوں کے اساتذہ نے ٹائم اسکیل، ملازمتیں مستقل کرنے اور پروموشن کے سلسلے میں کراچی پریس کلب پر جاری احتجاج ختم کر دیا ہے۔

صدر ٹیچرز ایسوسی ایشن نے کہا کہ ریاست نے پر امن مظاہرین پر تشدد کیا، اساتذہ کو گرفتار کیا گیا، آرٹلری تھانے میں قید اساتذہ واپس آ گئے ہیں تاہم پریڈی اور گذری تھانے میں اساتذہ اب بھی زیر حراست ہیں۔

اشرف خاصخیلی کا کہنا تھا کہ اساتذہ اب جمعے اور ہفتے کو تدریسی عمل معطل کر کے یوم سیاہ منائیں گے، اور کل پریس کلب پر بھوک ہڑتالی کیمپ بھی لگائی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں:  اساتذہ کے احتجاج پر آنسو گیس کا استعمال، بلاول بھٹو کی اپنی ہی حکومت پر کڑی تنقید

انھوں نے کہا کہ گسٹا (گورنمنٹ سیکنڈری ٹیچرز ایسو سی ایشن) بورڈ کے امتحانات کا بائیکاٹ کرتی ہے، ڈیوٹیز نہیں کریں گے، 18 اپریل کو دوبارہ جمع ہوں گے اور وزیر اعلیٰ ہاؤس جائیں گے۔

خیال رہے آج سندھ کے سرکاری اسکولوں کے ٹیچرزٹائم اسکیل، مستقلی اور پروموشن کے لیے احتجاج کر رہے تھے، تاہم پریس کلب کے باہر احتجاج کرتے اساتذہ نے جب ریڈ زون میں داخل ہونے کی کوشش کی، تو پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس کی شیلنگ شروع کر دی۔

اس دوران اساتذہ پر کئی پولیس والوں نے ڈنڈے برسائے، کسی کو گریبان سے پکڑ کر گھسیٹا، تو کوئی لاٹھیوں کی زد میں آیا، اور علاقہ میدان جنگ بن گیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں