The news is by your side.

Advertisement

چادر گھاٹ کے نابینا حکیم

حیدرآباد(دکن) کا قدیم یونانی دوا خانہ، عثمانیہ دوا خانہ اور ان کی خدمات کا دنیا بھر میں شہرہ تھا۔ دور دراز سے مریض یہاں آتے تھے۔

معالجین ان دنوں جس تحمل اور دل جمعی کا مظاہرہ کرتے تھے وہ مریض کے حق میں دوا سے زیادہ فائدہ مند ثابت ہوتا تھا۔

ایک حکیم آشفتہ ہوا کرتے تھے، ان کا مطب چادر گھاٹ کے آس پاس تھا۔ حکیم نابینا ہمارے بچپن میں نامی گرامی حکیم تھے، انہیں دکھائی نہیں دیتا تھا۔ صرف نبض دیکھ کر نسخہ تجویز کرتے تھے۔ شاید حسینی علم میں ان کی رہائش گاہ تھی۔ انہیں اپنے وقت کا حاذق سمجھا جاتا تھا۔

پرانے شہر کے ایک اور ڈاکٹر سکسینہ کا ذکر بھی ناگزیر معلوم ہوتا ہے جو علی الصبح سے رات دیر گئے تک خدمات کے لیے دست یاب رہتے تھے۔ یہ اُس زمانے کی باتیں ہیں جب شہر میں ڈاکٹروں کا فقدان تھا اور مذکورہ ڈاکٹروں اور حکما نے مفت خدمات انجام دیں۔

( اپنے وقت کے نہایت قابل اور ماہر حکما اور طبیبوں سے متعلق یہ سطور ’حیدر آباد(دکن) جو کل تھا‘ کے عنوان سے پروفیسر یوسف سرمست کے مضمون سے لی گئی ہیں)

Comments

یہ بھی پڑھیں