The news is by your side.

Advertisement

تبت اپنا اعزاز برقرار رکھنے میں کامیاب

لھاسا: چین کے خود مختار علاقے تبت نے ماحولیات کے لحاظ سے دنیا کے بہترین مقامات میں سے ایک ہونے کا اعزاز برقرار رکھا۔

تفصیلات کے مطابق جمعرات کو جاری کی گئی تبت کے محکمہ ماحولیات کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ علاقے نے گزشتہ سال مستحکم ماحولیاتی معیار کو برقرار رکھا ہے، اور یہ اب بھی ماحولیات کے لحاظ سے دنیا کے بہترین مقامات میں سے ایک ہے۔

تبت کو اپنے بلند و بالا پہاڑوں کے باعث دنیا کی چھت بھی کہا جاتا ہے، یہ چین کا جنوب مغربی علاقہ ہے اور خود مختار ہے، رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ 2020 میں تبت کے اہم دریاؤں اور جھیلوں کے پانی اور ہوا کا معیار بہترین رہا۔

رپورٹ کے مطابق 2020 کے آخر تک تبت میں 4 لاکھ 12 ہزار 200 مربع کلو میٹر کے مجموعی رقبے پر جنگلی حیات کے محفوظ علاقے بنائے گئے، جو تبت کے کُل رقبے کے ایک تہائی سے زیادہ بنتا ہے۔

اس علاقے میں محفوظ قرار دیے گئے جانوروں (یعنی جن کا شکار یا انھیں نقصان نہیں پہنچایا جا سکتا) کی انواع کی آبادی میں گزشتہ برس نمایاں اضافہ بھی دیکھا گیا، جب کہ تبت میں پائے جانے والے نایاب اور خطرے سے دوچار جنگلی پودوں کی کل 214 اقسام کو ’جنگلی جانوروں اور پودوں کی خطرے سے دوچار اقسام‘ سے متعلق بین الاقوامی تجارتی کنونشن کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ چین جلد ہی تبت بھر میں ریل کی پٹریاں بچھانے جا رہا ہے، یہ ملک کے سب سے مہنگے سول انجینئرنگ منصوبوں میں سے ایک ہے، یہ ریلوے لائن 435 کلو میٹر طویل ہے، اور اس کے رواں ماہ کھلنے کی توقع ہے، 5.7 بلین ڈالرز لاگت کا یہ ٹریک دارالحکومت لھاسا سے نائنگچی شہر تک پھیلا ہوگا، یہ اس خطے کی پہلی برقی ریلوے ہوگی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں