تازہ ترین

’پاکستان کیلیے آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک سے اچھی خبریں آئیں گی‘

امریکا میں پاکستان کے سفیر مسعود خان نے کہا...

پاکستان کے بیلسٹک میزائل پروگرام کے حوالے سے ترجمان دفتر خارجہ کا اہم بیان

اسلام آباد : پاکستان کے بیلسٹک میزائل پروگرام کے...

ملازمین کے لئے خوشخبری: حکومت نے بڑی مشکل آسان کردی

اسلام آباد: حکومت نے اہم تعیناتیوں کی پالیسی میں...

ضمنی انتخابات میں فوج اور سول آرمڈ فورسز تعینات کرنے کی منظوری

اسلام آباد : ضمنی انتخابات میں فوج اور سول...

طویل مدتی قرض پروگرام : آئی ایم ایف نے پاکستان کی درخواست منظور کرلی

اسلام آباد: عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے...

تمباکو مصنوعات پر یکساں ٹیکس کی آئی ایم ایف کی سفارشات کا خیرمقدم

اسلام آباد میں قائم تھنک ٹینک کیپٹل کالنگ نے ان رپورٹس کا خیر مقدم کیا ہے کہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان سے مقامی اور غیر ملکی سگریٹ مینوفیکچررز دونوں پر یکساں ایکسائز ریٹ عائد کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

اجلاس میں سابق وزیر صحت ڈاکٹر ندیم جان کی جانب سے سگریٹ پر ٹیکسوں میں 50 فیصد اضافے کے مطالبے کو بھی سراہا گیا۔

تھنک ٹینک نے وفاقی وزیر کے اس بیان کی توثیق کی ہے جس میں انہوں نے اس پروپیگنڈے کو بے بنیاد قرار دیا ہے کہ ٹیکسوں میں اضافے سے سگریٹ کی اسمگلنگ ہوگی جس کے نتیجے میں قومی خزانے کو نقصان پہنچے گا۔
ایک اندازے کے مطابق پاکستان میں سگریٹ کی قیمتیں دیگر علاقائی ممالک کے مقابلے میں سب سے سستی ہیں۔

آئی ایم ایف کی سفارشات پر رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس نے تمام گھریلو طور پر تیار کردہ سگریٹوں پر ایک سلیب میں مستقل ایکسائز ریٹ لاگو کرنے کی تجویز دی ہے، چاہے مینوفیکچرر کی اصل کچھ بھی ہو۔
اس کا مطلب ہے کہ مقامی اور ملٹی نیشنل مینوفیکچررز کو ٹیکسوں میں کسی امتیاز کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا۔ اس وقت سگریٹ پر دو درجوں میں ٹیکس عائد ہے جس کے نتیجے میں سگریٹ کی صنعت سے ٹیکس کی وصولی کم ہو رہی ہے۔

مزید برآں، آئی ایم ایف نے صحت پر پڑنے والے اثرات کا حوالہ دیتے ہوئے روایتی تمباکو مصنوعات کی طرح ای سگریٹ پر بھی ٹیکس عائد کرنے کی تجویز پیش کی ہے۔

انٹرنیشنل اسلامک یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر حسن شہزاد نے کہا کہ یہ سفارش عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کی جانب سے طے کردہ ہدایات کے عین مطابق ہے۔ انہوں نے کہا کہ دو سطحی نظام کی وجہ سے ملٹی نیشنل کمپنیاں اپنے سگریٹ کو نچلے درجے میں رکھنے میں کامیاب ہوجاتی ہیں جس کے نتیجے میں سگریٹ کی قیمتوں میں کمی واقع ہوتی ہے۔

ان سفارشات کا مقصد سگریٹ کی مصنوعات پر مساوی ٹیکس کو یقینی بنانا ہے، قطع نظر اس کے کہ ان کا ذریعہ کچھ بھی ہو۔

تھنک ٹینک کا کہنا ہے کہ ایک اندازے کے مطابق بین الاقوامی تمباکو کمپنیوں کے اثر و رسوخ کی وجہ سے حکومت کو 567 ارب روپے کا نقصان ہوا ہے۔

اس میں کہا گیا ہے کہ تمباکو نوشی نے معاشرے کو جو نقصان پہنچایا ہے اس کی پیمائش کرنے کے لئے تحقیق کی کمی ہے۔ اس نقصان کا تخمینہ لگانے کے لئے کیا گیا سروے معاشیات کی طرف بہت زیادہ جھکا ہوا ہے ، لہذا معاشرے میں تمباکو نوشی کو کم کرنے کے لئے کوئی حل پیش نہیں کیا گیا ہے۔

اسی طرح، تمباکو نوشی اور اس کے نفسیاتی اثرات کا مقابلہ کرنے کے لئے کوئی ٹھوس میڈیا حکمت عملی نہیں ہے.
اس میں کہا گیا ہے کہ تمباکو نوشی کرنے والوں کی اکثریت تیس سال کی عمر میں ہے اور اس عمر کے گروپ کے بارے میں سوچنے کی ضرورت ہے جو پالیسیاں تشکیل دے رہے ہیں۔

تمباکو نوشی کا مقابلہ کرنے کے لئے بنائے گئے ادارے ہم آہنگی اور بصیرت کی کمی کا شکار ہیں۔ لہذا، تیزی سے اپنی مطابقت کھو رہے ہیں. کیپیٹل کالنگ نے تمباکو کا مقابلہ کرنے کے طریقہ کار کو ازسرنو ترتیب دینے اور تمباکو کی مصنوعات پر یکساں ٹیکس کے لئے آئی ایم ایف کی سفارشات پر مکمل عمل درآمد کا مطالبہ کیا ہے۔
واضح رہے کہ مبینہ طور پر کیپیٹل کالنگ پاکستان کا واحد آزاد تھنک ٹینک ہے جس کی رپورٹ آئی ایم ایف نے اپنی سفارشات کے ریفرنس سیکشن میں پیش کی ہے۔

Comments

- Advertisement -
حسن حفیظ
حسن حفیظ
حسن حفیظ ایک نوجوان صحافی ہیں اور اے آر وائی نیوز لاہور کے لئے صحت، تعلیم اور ایوی ایشن سے متعلق خبریں رپورٹ کرتے ہیں