ترکی میں تاریخی آئینی ریفرنڈم کےلیےووٹنگ -
The news is by your side.

Advertisement

ترکی میں تاریخی آئینی ریفرنڈم کےلیےووٹنگ

انقرہ : ترکی میں صدراتی نظام کےلیے آئینی ریفرنڈم کے لیے ووٹنگ کا عمل جاری ہے۔ریفرنڈم میں ترک شہری آئینی تبدیلیوں کی منظوری یا مخالفت کا فیصلہ کریں گے۔

تفصیلات کےمطابق ترکی میں صدارتی نظام رائج کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ ترک عوام آج ریفرنڈم میں کریں گے۔ریفرنڈم کی کامیابی کی صورت میں ترکی میں پارلیمانی نظام کےبجائےصدارتی نظام نافذ ہوجائے گا۔

ترک صدرطیب اردگان کا کہنا ہےکہ صدارتی نظام سےایک مستحکم ریاست قائم ہو گی،جس سےملک میں خوشحالی آئےگی۔
صدارتی نظام کے لیےہونے والےریفرنڈم میں اندرون ملک پانچ کروڑ 53 لاکھ سے زائد رائے دہندگان اپنا حق رائے دہی استعمال کریں گے۔

تازہ ترین سروے کے مطابق ترک عوام کی اکثریت صدارتی ڈرافٹ کی حمایت کر رہی ہے۔اس موقع پر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے ہیں۔


صدر کے اختیارات میں توسیع‘ترک پارلیمنٹ نے منظوری دے دی


یاد رہےکہ رواں سال جنوری میں ترک پارلیمنٹ نےصدر کے اختیارات بڑھانے سے متعلق نئے قانون کی منظوری دے دی تھی۔

ترک پارلمینٹ سے منظور ہونے والے نئے قانون کے متعلق ناقدین کا کہنا تھا کہ اس قانون کی مدد سے صدر اپنے اختیارات میں اضافہ کرنا چاہتے ہیں،جبکہ اردگان کا کہنا تھاکہ نیا قانون امریکہ اور فرانس کےمماثل ہوگا۔

واضح رہےکہ نئی اصلاحات کے تحت ملک کے وزیراعظم کا عہدہ موجودہ وزیراعظم بن علی یلدرم کے بجائے کسی اور شخصیت کے پاس جائے گا یا پھر اس عہدے کے جگہ نائب صدر لیں گے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں