The news is by your side.

Advertisement

ٹوئٹر کا صارفین کی ‘ذہنی صحت’ سے متعلق اہم فیصلہ

مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر اپنے صارفین کے لئے کچھ نیا کرنے کے جتن کرتا رہتا ہے، جسے شائقین کی جانب سے بے حد سراہا جاتا ہے۔

جرنل آئی ای ای ای ٹرانزیکشنز آن افیکٹِیو کمپیوٹنگ میں بتایا گیا ہے کہ سائنس دانوں نے ایک نیا ایلگوردم بنایا ہے جس کے متعلق ان کا کہنا ہے کہ یہ ٹوئٹر صارفین میں 90 فی صد درستگی کے ساتھ ڈپریشن کی نشان دہی کر سکتا ہے۔

تحقیق میں شریک برونیلز انسٹیٹیوٹ آف ڈیجیٹل فیوچر کے ڈائریکٹر عبدالصدقہ نے بتایا کہ محققین نے ایلگوردم کو دو بڑے ڈیٹا بیسز پر آزمایا اور نتائج نے دیگر ڈپریشن کی نشان دہی کی تکنیک کے خلاف بینچ مارک طے کیا، تمام کیسز میں محققین نے موجودہ تکنیکوں کو درستگی کے اعتبار سے شکست دی۔

سائنس دانوں کا کہنا تھا کہ دنیا بھر میں ڈپریشن کے ممکنہ مریضوں کی بڑی تعداد متعدد وجوہات کی وجہ سے پیشہ ورانہ مدد نہیں لیتی جس میں معاشرتی دباؤ یا ان کی ذہنی صورت حال کے حوالے سے لاعلمی شامل ہے۔ جس کے باعث مرض کی شناخت اورعلاج میں تاخیر ہوتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ٹویٹر کا حیران کن نیا فیچر

گزشتہ تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ سوشل میڈیا ڈیٹا افراد کی ذہنی اور جسمانی صحت کے حوالے اہم اشارے فراہم کرسکتے ہیں۔

یہ کام کیسے کرتا ہے؟ اس سےمتعلق سائنسدانوں کا کہنا تھا کہ الگوردم ایک ٹوئٹر صارف کی پبلک پروفائل سے 38 ڈیٹا پوائنٹس کا تجزیہ کرتے ہوئے اس کی ذہنی کیفیت کا تعین کرتا ہے۔

ان پوائنٹس میں ان کی پوسٹ کا مواد، وقت اور اس کے سوشل سرکل میں موجود دیگر صارفین شامل ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں