The news is by your side.

Advertisement

دو سال قبل سمندر میں گرنے والا کیمرامالک تک پہنچ گیا

تائیپے : دوسال قبل سمندر کی تہہ میں گم ہوجانے والا کیمرا صحیح حالت میں برآمد ہوا تھا، اسکول کے طلبہ نے کیمرے کے مالک کو فیس بُک کی مدد سے ڈھونڈ نکالا۔

تفصیلات کے مطابق جاپان سے تعلق رکھنے والی ایک طالبہ کا دو سال قبل سمندر کی تہہ میں گم ہوجانے والا کیمرا 2450 کلومیٹر کا طویل سفر طے کرکے تائیوان کے ایک ساحل سے برآمد ہوا تھا۔

یہ کیمرا تائیوان کے ایک اسکول کے بچوں کو ساحل سمندر کی صفائی کے دوران ملا ہے، کیمرا واٹر پروف کیسنگ میں ہونے کی وجہ سے دو سال بعد بھی درست حالت میں موجود تھا۔

کیمرا ڈھونڈنے والے اسکول کے بچوں اور اساتذہ نے فیس بُک کے ذریعے کیمرے کی اصل مالک کو تلاش کرنے کے بعد اسے  پہنچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق مذکورہ کیمرا جاپان کی سیرانا نامی طالبہ کا ہے، جو دو سال قبل سمندر میں اسکوبا ڈائیونگ کے دوران گم ہوگیا تھا۔

سیرانا کا کہنا تھا کہ ’ستمبر 2015 میں اپنے دوستوں کے ہمراہ تائیوان سے 2450 کلو میٹر دور اوکیناوا میں چھٹیاں گزارنے گئی تھی۔

اسکوبا ڈائیونگ کے دوران میرے ایک دوست کو آکسیجن کی کمی محسوس ہوئی تو میں اس کی مدد کرنے گئی جس دوران میرا کیمرا سمندر کی تہہ میں گم ہوگیا تھا۔

سیرانا نے برطانوی خبر رساں ادارے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’میں اس وقت حیرت میں گرفتار ہوگئی جب میرے دوستوں نے مجھے اس پوسٹ اور دو سال قبل سمندر کی تہہ میں لی گئی تصاویر کے بارے میں بتایا جو اسکول کے بچوں نے فیس بک پر پوسٹ کی تھی‘۔

دو سال قبل زیرِ آب لی گئی گروپ فوٹو

گمشدہ کیمرا دو سال بعد سینکڑوں میل کا سفر طے کرکے تائیوان کےایک ساحل تک پہنچا جسے اسکول کے بچوں نے ساحل سمندر کی صفائی کے دوران اٹھالیا تھا۔

برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق کیمرہ ایک گیارہ سالہ طالب علم کو ملا تھا، کیمرے کا کور بظاہر ایک چھوٹی سی چٹان کی مانند لگ رہا تھا جس کے گِرد سمندری گھونگے اور سیپیاں چمٹی ہوئی تھیں۔

اسکول ٹیچر کا کہنا تھا کہ کیمرا واٹر پروف کیسنگ میں ہونے کے باعث صحیح سلامت تھا اور زیادہ حیرت تب ہوئی جب ایک لڑکے نے کیمرہ آن کیا تو معلوم ہوا کہ وہ ابھی تک چارج ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں