یو اے ای کے صدر نے عید الضحیٰ پر 704 قیدیوں کی سزائیں معاف کردیں pardons 704 prisoners
The news is by your side.

Advertisement

یو اے ای: صدر نے عید الضحیٰ پر 704 قیدیوں کی سزائیں معاف کردیں

ابوظہبی : متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زاید النہیان نے عید الاضحیٰ کے موقع پر مختلف جرائم میں بند 704 قیدیوں کو رہا کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کے صدر اور ابوظہبی کے حاکم وقت شیخ خلیفہ بن زاید النہیان نے عید الاضحیٰ کے موقع پر یو اے ای کی جیلوں میں بند 704 قیدیوں کی سزائیں معاف کرکے رہائی دینے کا حکم دیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں اداارے کا کہنا تھا کہ شیخ خلیفہ بن زاید النہیان کے حکم پر جن قیدیوں کو عید کے موقع پر رہا کیا جائے گا انہیں متحدہ عرب امارات کی عدالت نے مخلتف جرائم پیشہ کارروائیوں میں ملوث ہونے پر سزا سنائی تھی۔

عرب میڈیا کا کہنا تھا کہ امارات کے صدر اور حاکم ابوظہبی شیخ خلیفہ بن زاید النہیان نے اعلان کیا ہے کہ جیل سے رہا کیے جانے والے قیدیوں کے مالی مسائل کو بھی حل کیا جائے گا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ مذکورہ امور شیخ زاید النہیان دلچسپی کا حصّہ ہیں، شیخ خلیفہ قیدیوں کی سزائیں معاف کرنے میں دلچسپی رکھتے ہیں تاکہ وہ اپنی نئی زندگی کا آغاز کرسکیں اور اپنے اہل خانہ کی غربت کو ختم کرنے کے لیے کوششیں کریں۔

یاد رہے کہ متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زاید النہیان نے ایمنسٹی اسکیم کا اعلان کیا تھا کہ جس کے ذریعے غیر قانونی طور ہر یو اے ای میں مقیم افراد اپنے  گھر جاکر اہل خانہ سے ملاقات کرسکیں۔

ایمنسٹی اسکیم سے فائدہ اٹھانے کے لیے یو اے ای حکومت نے اپنے ملک میں قائم تمام سفارت خانوں کے نمائندگان سے اپیل کی ہے کہ وہ اپنے اپنے شہریوں کو وطن واپس جانے یا پھر متحدہ عرب امارات میں قیام کو قانونی بنانے کی ترغیب دیں تاکہ زیادہ سے زیادہ لوگوں کے مسائل حل ہوں۔

عرب میڈیا کے مطابق جو غیر قانونی تارکین دبئی میں قیام کو قانونی بنانے کی استدعا کریں گے، انہیں مستقبل میں حکومت کی جانب سے عائد کیا جانے والا ٹیکس باقاعدگی سے ادا کرنا ہوگا۔

حکومت کی جانب سے متعارف کرانی جانے والی اسکیم سے فائدہ اٹھانے کے لیے پہلے روز غیر قانونی طور پر رہائش پذیر پندرہ سو تینتالیس (1543) افراد نے درخواستیں جمع کروائیں تھیں ،جن میں سے اکثر کی خواہش دبئی میں ہی مزید قیام کرنا تھا جبکہ کچھ نے اپنے اپنے وطن واپس جانے کی اجازت بھی مانگی تھی ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں