The news is by your side.

Advertisement

بانی وکی لیکس کی امریکا حوالگی پر برطانوی عدالت نے فیصلہ سنا دیا

لندن: بانی وکی لیکس جولین اسانج کو امریکا کے حوالے کیا جائے گا یا نہیں؟ برطانوی عدالت نے اپنا فیصلہ سنا دیا۔

تفصیلات کے مطابق برطانوی عدالت نے بانی وکی لیکس جولین اسانج کو امریکا کے حوالے کرنے کی امریکی درخواست مسترد کر دی ہے۔

جولین اسانج پر 10 برس قبل خفیہ امریکی فوجی دستاویز شائع کرنے کا الزام ہے، امریکا نے جولین اسانج کی حوالگی کے لیے برطانوی عدالت میں درخواست دے رکھی تھی۔

جولین اسانج کی حوالگی کی درخواست پر فیصلہ لندن کی اولڈ بیلی کی عدالت نے کیا، کورٹ میں جولین اسانج کی حمایت میں پیئر کوربن کے علاوہ حمایت کرنے والوں کی بڑی تعداد موجود تھی۔

خیال رہے کہ جولین اسانج نے 7 برس لندن میں ایکواڈور کے سفارت خانے میں بطور سیاسی پناہ گزین گزارے۔

اپریل 2017 میں وکی لیکس نے انکشاف کیا تھا کہ امریکی سیکورٹی ایجنسی نے پاکستان کے موبائل سسٹم کی ہیکنگ بھی کی، ہیکنگ کے لیے مختلف سائبر ویپنز استعمال کیے گئے تھے۔

امریکی ایجنسی این ایس اے کئی عالمی رہنماؤں کی جاسوسی کے لیے وائر ٹیپنگ اور دیگر سائبر ہتھیار استعمال کرتی رہی ہے جب کہ وکی لیکس نے سیکڑوں مختلف نوعیت کے سائبر ہتھیاروں کا بھی انکشاف کیا ہے، اُن میں پاکستانی موبائل سسٹم کی ہیکنگ کے لیے این ایس اے کی کوڈ پوائنٹنگ بھی شامل تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں