The news is by your side.

Advertisement

یوکرینی شہریوں کا ‘قتل عام’ روس کے خلاف سازش قرار

ماسکو: روس نے یوکرینی قصبے ‘پوجا’ میں شہریوں کی قتل عام کو سازش قرار دیتے ہوئے بین الاقوامی برادری سے بڑا مطالبہ کردیا ہے۔

غیر ملکی خبر ایجنسی کے مطابق ترجمان کریملن دیمتری پیسکوف نے ماسکو میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ یوکرین کے قصبے بوچا میں شہریوں کے قتل سے متعلق کسی بھی الزام کی واضح طور پر تردید کرتے ہیں، بوچا میں شہریوں کی ہلاکت کے الزام کو شک کی نگاہ سے دیکھا جاناچاہیے۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ روسی ماہرین کو بوچا واقعے کے پیش کردہ مواد میں مختلف جعلی اور ویڈیو ایڈیٹس کے اشارے ملے ہیں، ترجمان نے مزید کہا کہ بوچا میں جوہوا اس حقائق اور کرونولوجی یوکرینی ورژن سے مطابقت نہیں رکھتی۔ترجمان کریملن نے مطالبہ کیا کہ بین الاقوامی رہنما بوچا الزامات پر فیصلے میں جلدی نہ کریں، الزام عائد کرنے والے بین الاقوامی رہنماؤں کو بوچا الزامات پر روسی وضاحت اور مختلف ذرائع سے بھی معلومات لینی چاہئیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ یوکرین کے قصبے بوچا میں پیش آنے والے واقعے پر بین الاقوامی سطح پر بات کی جائے۔

واضح رہے کہ یوکرین کے بوچا قصبے سے روسی فوج کی واپسی کے بعد ایک چرچ کے احاطے میں اجتماعی قبر کا پتہ چلا تھا، یوکرین نے روسی فورسز پر کیف کے نواح میں واقع اس قصبے میں "قتل عام” کا الزام عائد کیا تھا۔

یوکرین کے ایک اعلی عہدیدار کا کہنا تھا کہ بوچا قصبے سے روسی افواج کی واپسی کے بعد علاقے سے 410 شہریوں کی لاشیں ملی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں